Tags » Faiz

Kamen Rider 555 (Qualifier)

Ok, this is going to be a little Brag-laden, but I am excited for this release, although it was not an official Drive episode. 125 more words

Subtitles

Menggali Lubang Sendiri

Hari ini mengalami hal yang sungguh tidak biasa. Kami sekumpulan orang tua murid SD dimarahi oleh kepala sekolah. Ada tidak sekolah lain yang seperti ini? Tapi sungguh pula kami tidak keberatan. 294 more words

Faiz

Aahil and Sanam’s romance on a high; Aahil dreams of a perfect family with Sanam in Qubool Hai

WHAT’S INSIDE:

SEHER FOOLING REHAAN TO DUPE HIS MONEY
HAYA FEELING PRESSURIZED FROM FAIZ’S EXPECTATIONS
AAHIL CONFESSES HIS INDIRECT FEELINGS TO SANAM

INTERESTED? READ ON………………. 455 more words

Telly Reviews

#1

Sia-sia kau hapus rintiknya
Hujan ini belum mau beranjak
Seperti ingatanku padanya
Terlalu lekat

#proyeknuliskecil

Faiz

Gar mujhe yaqeen ho mere humdum mere dost - Faiz (گر مجھے اس کا یقیں ہومرے ہمدم مرے دوست)


گر مجھے اس کا یقیں ہو

مرے ہمدم مرے دوست

گر مجھے اس کا یقیں ہو

کہ ترے دل کی تھکن

تری آنکھوں کی اداسی، ترے سینے کی جلن

مری دلجوئی، مرے پیار سے مٹ جائے گی

گر مرا حرفِ تسلی وہ دوا ہو جس سے

جی اٹھے پھر ترا اجھڑا ہوا بے نور دماغ

تری پیشانی سے دھل جائیں یہ تذلیل کے داغ

تری بیمار جوانی کو شفا ہو جائے

گر مجھے اس کا یقیں ہو مرے ہمدم مرے دوست

روز و شب، شام و سحر میں تجھے بہلاتا رہوں

میں تجھے گیت سناتا رہوں

ہلکے شیریں

آبشاروں کے، بہاروں کے، چمن زاروں کے گیت

آمدِ صبح کے، مہتاب کے، سیاروں کے گیت

تجھ سے میں حسن و محبت کی حکایات کہوں

کیسے مغرور حسیناوں کے برفاب سے جسم

گرم ہاتھوں کی حرارت سے پگھل جاتے ہیں

کیسے اک چہرے کے ٹھہرے ہوئے مانوس نقوش

دیکھتے دیکھتے یک لخت بدل جاتے ہیں

کس طرح عارضِ محبوب کا شفاف بلور

یک بیک بادہ احمر سے دہک جاتا ہے

کیسے گلچیں کے لئے جھکتی ہے خود شاخِ گلاں

کس طرح رات کا ایوان مہک جاتا ہے

یونہی گاتا رہوں، گاتا رہوں تری خاطر

گیت بنتا رہوں، بیٹھا رہوں تری خاطر

پر مرے گیت ترے دکھ کا مداوا ہی نہیں

نغمہ جراح نہیں، مونس و غم خوار سہی

گیت نشتر تو نہیں، مرہمِ آزار سہی

ترے آزار کا چارہ نہیں نشتر کے سوا

اور یہ سفاک مسیحہ مرے قبضے میں نہیں

اس جہاں کے کسی ذی روح کے قبضے میں نہیں

ہاں مگر ترے سوا ۔ ۔ ۔ ۔

ترے سوا ۔۔۔۔

ترے سوا ۔۔۔

فیض احمد فیض

Poetry