Tags » Others

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó para Playboy Argentina, Octubre 2014 http://ow.ly/DyN2t #Playboy #Argentina #Soho #Noticias

Others

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó para Playboy Argentina, Octubre 2014 http://ow.ly/DyN2t #Playboy #Argentina #Soho #Noticias

Others

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó para Playboy Argentina, Octubre 2014 http://ow.ly/DyN2t #Playboy #Argentina #Soho #Noticias

Others

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó

Jésica Hereñú (@Jesica_here) se desnudó para Playboy Argentina, Octubre 2014 http://ow.ly/DyN2t #Playboy #Argentina #Soho #Noticias

Others

ISLAMI LIBAAS KE BAAZ ADAAB

👇اسلامی لباس کے بعض آداب
———————–
شریعت کے بتائے ہوئے آداب اور اصولوں کے مطابق ہو مندرجہ ذیل سطور میں لباس اور زینت کے اصول و آداب عرض ہیں :

1⃣ستر ڈھانکنا : ستر ڈھانکنا ایک اہم اسلامی ادب ہے ،بلکہ واجب ہے : کیونکہ ستر کھلارکھنے سے کئی برائیاں پیدا ہوتی ہیں اور اسلام نے برائیوں تک پہنچانے والے تمام راستوں کو بند کردیا ہے ،اور مردوں اور عورتوں کو ایک دوسرے کی ستر(شرمگاہوں) کو دیکھنے سے منع فرمایاہے: ۔لَا یَنظُرِ الرَّجُلُ اِلَی عَورَةِ الرَّجُلِ وَ لَا المَراَةُ اِلَیٰ عَورَةِ المَرَاةِ
📚 ( مسلم )۔
مرد آدمی دوسرے مرد آدمی کا ستر(شرم گاہ) کو نہ دیکھے اور نہ عورت دوسری عورت کا ستر(شرم گاہ)کو دیکھے….۔

2⃣سفید لباس پہننا مستحب ہے :
۰ ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ا نے فرمایا:اِلبَسُوا مِن ثِیَابِکُم البَیَاضَ فَاِنَّھَا مِن خَیرِ ثِیَابِکُم وَکَفِّنُوا فِیھَا مَوتَاکُم ….الحدیث ۔
📚(احمد،ابوداود،ابن ماجہ ،ترمذی:صحیح)۔
سفید کپڑے پہنو اس لیے کہ وہ تمہارے بہترین کپڑوںمیں سے ہیں اور اسی میں اپنے مُردوں کو کفن دو۔

3⃣رنگوں میں زعفرانی اور خالص لال رنگ کا لباس پہننا منع ہے :
عبداللہ بن عمرو بن العاص کہتے ہیںکہ : رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے مجھے دوزعفرانی کپڑے پہنے دیکھاتو فرمایا: یقینا یہ کفار کے کپڑے ہیں لہذا تم انہیں نہ پہنو۔ 📚(مسلم ، احمد ، نسائی )۔
یعنی اس میں کافروں کی مشابہت ہے ، لہذا ایسا لباس جو غیر مسلموں کی مذہبی یا قومی پہچان ہے تو اس کا پہننا حرام ہے ۔

4⃣ایسا لباس جو خالص لال نہ ہو بلکہ اس میں دیگر رنگوں کی آمیزش ہو تو ایسا لباس پہننے میں کوئی حرج نہیں ہے : کیوں کہ رسول اللہ ا کے بارے میں براءبن عازب فرماتے ہیں کہ : میں نے آپ کو لال لباس زیب تن کیے ہویے دیکھا ، میں نے (آپ پر )اس سے خوبصورت کوئی اور چیز (لباس) نہیں دیکھی۔ 📚(بخاری )۔
ابن قیم رحمہ اللہ تعالی فرماتے ہیں کہ لال لباس یمن کی چادر تھی اور یمن کی چادریں خالص لال رنگ سے رنگی ہوئی نہیں ہوتی تھیں ۔
📚 (فتح الباری: ۰۱/ ۹۱۳ ) ۔
۰ جن احادیث میں کالے یا سرخ رنگ کے لباس پہننے کا ذکر ہے اس سے مراد سرخی مائل یا سیاہی مائل لکیر دار کپڑے ہیں ۔ حافظ ابن قیم رحمه الله نے لکھا ہے کہ بالکل سیاہ ، سبز اور سرخ لباس آپ نے نہیں پہنا ، حدیث میں ایسے رنگوں سے مراد ان رنگوں کا غالب ہونا ہے ، البتہ دستار مبارک اور سردیوں میں اوپر لینے والی چادر خالص کالے رنگ کی استعمال فرمائی ہے ۔ 📚(فہم الحدیث جلد ۲، ص:۷۴۲)۔

5⃣لباس پہنتے ہوئے سیدھی جانب سے شروع کرنا چاہیے : عائشہ رضی اللہ عنہاکہتی ہیں کہ : نبی کریم صلى الله عليه وسلم اپنے ہر(اچھے)کام میں سیدھی جانب سے (شروع کرنا ) پسند فرماتے تھے : جوتے پہنتے وقت، کنگی کرتے وقت اور وضو کرتے وقت۔
📚(مسلم)۔

6⃣کپڑا پہنتے وقت یہ دعا پڑھیں: اَلحَمدُ لِلّٰہِ الَّذِی کَسَانِی ھٰذَا الثَّوبَ ، وَرَزَقَنِیہِ مِن غَیرِحَولٍ مِنِّی وَلَاقُوَّةٍ۔ 📚( ابوداود ) ۔
۰ معاذ بن انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ا نے فرمایا جو شخص کپڑا پہن کر یہ دعا پڑھے تواللہ تعالی اس کے اگلے( اور پچھلے )گناہ بخش دیتاہے ۔
📚( ابوداود ، دارمی، البانی نے اس حدیث کو حسن کہاہے سوائے قوسین کے الفاظ کے)۔

7⃣جب نیا لباس پہنیں تو یہ دعا پڑھیں :
۰ ابوسعید خدری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ا جب کوئی نیاکپڑا پہنتے تو اس کا نام لیتے مثلا عمامہ ،قمیص، یا چادر پھر یہ دعا پڑھتے : اَللّٰھُمَّ لَکَ الحَمدُ اَنتَ کَسَوتَنِیہِ ، اَساَلُکَ مِن خَیرِ ہِ وَخَیرِ مَاصُنِعَ لَہ وَاَعُوذُ بِکَ مِن شَرِّہِ وَشَرِّ مَا صُنِعَ لَہ
📚( ابوداود، ترمذی :صحیح) ۔

8⃣نیا لباس پہننے والے کے لیے یہ دعا دیں : ۔ تُبلِی وَ یُخلِفُ اللّٰہُ تَعَالَیٰ۔ ( بخاری ،احمد ، ابوداود) ۔ اور جب لباس اتاریں تو بِسمِ اللّٰہِ۔ کہہ کر اتارے۔
📚(ترمذی و صحیح الجامع )۔

9⃣مرد کا لباس اونچا اور عورت کا لبا س لمبا ہوہونا چاہیے : شریعت نے دونوں کے لباس میں لمبے پن اور چھوٹے پن کے لحاظ سے فرق کیا ہے ۔ مرد کے لیے آدھی پنڈلی سے لیکر ٹخنوں سے اوپر تک حد مقرر کی ہے اور عورت کے لیے دونوں قدم بھی ڈھانکنا لازم ہے تاکہ مردوں کے لیے فتنہ کا باعث نہ بنے ۔

🔄عجیب بات یہ ہے کہ آج معاملہ بالکل الٹ چکا ہے ؛اکثر مرد اپنے کپڑوں کو نیچے کرلیے ہیں یہاں تک کہ زمین کوجھاڑودینے لگ گئے ! اور اکثر عورتیں اپنا لباس اونچااورچھوٹا کرلیں یہاں تک کہ ان کی پنڈلیاں ظاہر ہونے لگیں اور بعض اس سے بھی تجاوزکر گئیں ۔
یہ ایک کبیرہ گناہ ہے جس پر احادیث میں سخت وعید آئی ہے :
۰ ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم صلى الله عليه وسلم نے فرمایا : دونوں ٹخنوں سے نیچے جتنے حصہ پر تہبند لٹکا ہو گا وہ جہنم کی آگ میں (جلایا جائے گا)۔ اور امام احمد کی روایت میں یوں ہے کہ)۔ مومن کا تہبند آدھی پنڈلیوں سے لیکر ٹخنوں کے اوپر تک ہے ،لہذا جس کا تہبند اِس سے نیچے ہوگا وہ جہنم کی آگ میں (جلایا جائے گا)۔
📚(بخاری ،احمد، نسائی)۔
۰ رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے(ایک بار) تہبند کا ذکر فرمایا تو ام سلمہ – ام المومنین – نے پوچھا : یارسول اللہ ! عورت ( کا تہبند کہا ںتک ہونی چاہیے )؟آپ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا : (پنڈلی سے )ایک بالشت نیچے رکھے ، ام سلمہ ؓ نے کہا: تب تو اس کا (کچھ حصہ ) ظاہر ہوگا ۔ آپ فرمایا : ہاں تو ایک ہاتھ نیچے رکھ لے،اس سے زیادہ نہ کرے۔
📚 (احمد ، ابوداود، ترمذی ابن ماجہ ، مالک ، دارمی : صحیح)
۰ نوٹ : عورت کواپنا کپڑا لمبا رکھنے کاحکم ہے؛ تاکہ اس کے دونوں قدم چھپ جائیں ، اگر عورت کا کپڑا اس کے قدموں کو نہ چھپا سکے تو موزے پہن کر بھی انہیں ڈھانک سکتی ہے ۔
ابن عثیمین رحمہ اللہ تعالی فرماتے ہیں : اکثر اہل علم کے نزدیک عورت کا اپنے قدموں کو ڈھانکنا مشروع بلکہ واجب ہے ۔ لہذا عورت کو چاہیے کہ وہ اپنے دونوں قدموں کو کسی اضافی کپڑے سے یا موزے وغیرہ سے ڈھانک لے ۔
📚(فتاوی ابن عثمین : ۲/۸۳۸)۔

🔟تکبر سے کپڑا لٹکانا حرام ہے : ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: اللہ تعالی قیامت کے دن اس شخص کی طرف نظرِ(رحمت ) سے نہیں دیکھے گا( یعنی اس پر غضبنا ک ہوگا) جس نے تکبر کے ساتھ اپنا تہبند (ازار ، پیانٹ،لنگی وغیرہ ٹخنے سے نیچے ) لٹکا کر چلتاہے ۔
📚(بخاری ، مسلم،احمد)۔

Others

This is my First Post

This is my first attempt at creating a blog in WordPress.

Learning

Nationals Beckoning!

Another piece of terrific news.

We have won the Regional level Children’s Science Congress, beating a field of around 40 schools from throughout Maharashtra, and will be taking part in the coveted 22nd National Children’s Science Congress to be held in our school in December! 174 more words

Others