Tags » Shahada

Islamic Online University

Assalamu Alaikum Wa Rahmatullahi Wa Barakatuh

Something new I’m gonna be doing, actually I’ve already started. Thanks to a sister who reads me blog she informed me about this online Islamic University website. 200 more words

Allah

پھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا.....

اظہار رائے کی نام نہاد آزادی کے خود ساختہ نظریے کی آڑ میں فرانس کے دریدہ دہن جریدے ’’چارلی ایبڈو‘‘ نے جس طرح کائنات کی سب سے محترم، مقدس اور محسن شخصیت رسالت مآب حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی شان اقدس میں گستاخی کر کے اپنی پست و غلیظ سوچ آشکار کی ہے، وہ انتہاپسندی کی اعلیٰ ترین مثال ہے۔ جریدے کے مالکان کی یہ گستاخانہ حرکت نہ صرف صحافتی دہشت گردی ہے، بلکہ بین الاقوامی سطح پر بدترین و سنگین ترین دہشت گردی کے زمرے میں آتی ہے۔

متعصب اہل مغرب کی ہلہ شیری پر گستاخ جریدے کی جانب سے گستاخانہ خاکے شایع کیے جانے پر پورا عالم اسلام مضطرب اور غم و غصے میں مبتلا ہے۔ ہر مسلمان کا دل انتہائی رنجیدہ ہے اور رنجیدہ ہونا ایک فطری امر ہے، کیونکہ مسلمان چاہے جتنا بھی گناہگار ہو، خدا کے بعد اس کے پاس سب سے مضبوط سہارا شفیع المذنبین کی ذات اطہر کا ہی سہارا ہوتا ہے۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہر مسلمان کے نزدیک اپنی جان، مال، دولت اور تمام رشتہ داروں سے بھی عزیز ہیں۔ ہر مسلمان کی پوری جمع پونجی، ٹوٹل اثاثہ اور کل کائنات وہی ذات ستودہ صفات ہے، جس کا نام نامی لیتے ہوئے زندگی کا خوشگوار ترین احساس ہوتا ہے۔ بقول منیر نیازی مرحوم

میں جو اک برباد ہوں، آباد رکھتا ہے مجھے

دیر تک اسم محمدؐ شاد رکھتا ہے مجھے

مغرب کے انوکھے و نرالے قوانین اور نظریے عقل سے بالاتر ہیں۔ مغرب میں ہر چیز کے حقوق متعین ہیں، لیکن وہ عظیم ہستیاں جنہوں نے اس روئے زمین کو اپنی روشن و ارفع تعلیمات سے منور کیا، ان کی کھلے عام توہین کی جاتی ہے۔ کیا کسی بھی یاوہ گو، دریدہ دہن، خبطی شخص کو ان مقدس شخصیات کی ذات عالی پر کیچڑ اچھالنے کا ’’حق‘‘ حاصل ہونا نام نہاد آزادی اظہار رائے ہے؟ اگر اسی کو آزادی اظہار رائے کا حق کہتے ہیں تو پھر یہ آزادی عالم اسلام کو کسی طور بھی قابل قبول نہیں ہے۔

مغرب کی کھلی منافقت تو دیکھیے! ایک طرف ہولوکاسٹ کے تاریخی افسانے پر اظہار رائے کی آزادی سلب اور زبان کھولنا سنگین جرم قرار، جب کہ دوسری جانب آزادی اظہار رائے کے نام پر محسن انسانیت صلی اللہ علیہ وسلم کی توہین کرنا حق قرار دیا جائے۔ دراصل مغرب نے اسلام اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے حوالے سے ہمیشہ منافقت سے کام لیا ہے۔ یہ نہ صرف اہل مغرب کی منافقت ہے، بلکہ ان کی ذہینت میں بھری وہ غلیظ سوچ ہے، جسے وہ ’’تہذیب‘‘ کا نام دیتے ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ ہادی عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات اقدس میں گستاخی کرنا ان بدبختوں کی فطرت کا حصہ ہے، جس پر یہ ہمیشہ سے عمل کرتے آئے ہیں۔

یہ حقیقت ہے کہ گستاخوں کی یہ بے چینی صرف اورصرف اسلام میں روز افزوں ترقی کی وجہ سے ہے۔ جوں جوں یہ گستاخ لوگ اسلام اور محسن انسانیت صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف اپنی پراگندہ و بدبودار سوچ کے ذریعے گھنائونے ہتھکنڈے استعمال کرنا شروع کرتے ہیں، توں توں اسلام میں دلچسپی و مسلمانوں کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہونا شروع ہوجاتا ہے۔ گزشتہ چند سال میں مسلمانوں کی تیزی سے بڑھتی ہوئی تعداد اس بات کی گواہ ہے۔

نائن الیون کے بعد جوں ہی اہل مغرب نے اسلام کے خلاف پروپیگنڈا شروع کیا، تو ساری دنیا کی توجہ اسلام کی طرف مبذول ہوئی اور مغرب میں لوگوں نے اسلام، قرآن، اسلامی تعلیمات اور حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات اقدس کے بارے میں گہرائی سے مطالعہ شروع کردیا۔ فطری طور پراس دلچسپی نے ساری دنیا میں قبولیت اسلام کا دروازہ کھول دیا۔ اسلام کے مطالعے کے بعد لوگ اسلام سے متاثر ہوکر جوق در جوق اسلام کے دائرے میں داخل ہونے لگے۔

اسلام کے پھیلتے دائرے کی وسعت کا یہ عالم ہے کہ مغربی خاتون صحافی ’’اوریانہ فلاسی‘‘ کہتی ہے کہ آنے والے بیس سال میں پورے یورپ کے کم از کم چھ بڑے شہر اسلام کی کالونی بن جائیں گے، کیونکہ ان شہروں میں مسلمان کل آبادی کا تیس سے چالیس فیصد تک ہو جائیں گے۔ ایک متنازعہ مصنف میشل ہولیبیک نے اپنے ایک ناول میں ایک فرضی ، تخیلاتی خاکہ کشی کی ہے۔ وہ 2022 کے فرانس کا منظر تصور کرتے ہوئے لکھتا ہے: ’’ایک مسلمان صدر اقتدار میں آجاتا ہے اور فرانس کے تمام اسکولوں میں مذہبی تعلیم کو لازمی قرار دیتا ہے، ساتھ ہی خواتین کے کام کرنے پر پابندی عاید کر دیتا ہے اور فرانس میں ایک سے زیادہ شادیوں کی اجازت دے دی جاتی ہے۔

اسلام کی تیزی سے بڑھتی مقبولیت و ترقی کے باعث دشمنانِ اسلام کے سینوں پر سانپ لوٹ رہے ہیں اور اسلام کے بڑھتے کاروانِ نور کو گل کرنے کی ہرممکنہ کوششوں میں جتے ہوئے ہیں۔ یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہے کہ لاکھ بھونڈے حربوں کے باوجود یہ بدبخت لوگ اسلام کی پھیلتی ہوئی کرنوں کو روکنے میں ناکام رہے ہیں، یہ ناکامی ہی ان کی بے چینی کا سبب بن رہی ہے، جس کے باعث یہ مسلمانوں اور اسلام کے خلاف اپنے گھٹیا حربے آزماتے ہیں، لیکن ناکام لوٹتے ہیں۔

ساری دنیا جانتی ہے کہ چاند کی چاندنی کتوں سے گوارا نہیں ہوتی، لیکن وہ اس کو ماند و مدہم بھی نہیں کر سکتے، اس طرح بے بس کتے اپنی بے چین و خصلت بد کا مظاہرہ چاند کو بھونک کر کرتے ہیں۔ بھونکنا چونکہ کتوں کی فطرت ہے، اس لیے یہ قیامت تک چمکتے چاند کو بھونکتے رہیں گے، لیکن ان کے بھونکنے سے نہ تو آج تک چاند کی چاندنی ماند پڑی ہے اور نہ ہی قیامت تک اس میں کوئی کمی آئے گی۔

آپ علیہ السلام کی شان مقدس میں گستاخی کرنے والے لوگ وجۂ کائنات، رسالت مآب، محسن انسانیت سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کے دین کی کرنوں کو پھیلتا ہوا دیکھ کر چیں بجبیں و غمزدہ ہوتے ہیں۔ اسلام کی روشنی کا دن بدن تیزی کے ساتھ پھیلنا ان کو گوارا نہیں ہوتا، اسلام کی روزبروز ترقی ان کو ایک آنکھ نہیں بھاتی، لیکن اسلام کے پھیلتے ہوئے نور کو روک بھی نہیں سکتے۔

پھر یہ لوگ اپنی پریشانی، بے بسی، بغض و عناد اور اپنی خصلت بد کا اظہار انسان کو انسانیت سکھانے والی سب سے محترم و عظیم ذات حضرت محمد

مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان اقدس میں گستاخی کرکے کرتے ہیں، لیکن یہ بات واضح ہے کہ یہ بدبخت لوگ جیسے بھی حربے استعمال کرلیں، لیکن اسلام کی پھیلتی روشنی کو کسی صورت نہیں روک سکتے، ہاں قیامت تک مختلف حربوں کے ذریعے اپنی بدبختی کا اظہار کرتے رہیں گے، جس سے نہ تو آج تک اسلام کو کوئی نقصان پہنچا ہے اور نہ ہی قیامت تک پہنچے گا۔

سورہ صف میں ارشاد ہے: یہ (منکرین حق) چاہتے ہیں کہ اللہ کے نور کو اپنے منہ (کی پھونکوں) سے بجھا دیں، جب کہ اللہ اپنے نور کو پورا فرمانے والا ہے، اگرچہ کافر کتنا ہی ناپسند کریں۔ وہ ہے جس نے اپنے رسول کو ہدایت اور دین حق دے کر بھیجا، تاکہ اسے سب ادیان پر غالب و سربلند کر دے، خواہ مشرک کتنا ہی ناپسند کریں۔

نور خدا ہے کفر کی حرکت پہ خندہ زن

پھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا

عابد محمود عزام

Pakistan

January 21st, 2015

Assalamu Alaikum Wa Rahmatullahi Wa Barakatuh

Before I start does anyone know how I can fix the date on my wordpress? You see it’s January 21st right now (10:31 to be exact) but when I publish this post it’ll say it’s January 22nd. 738 more words

Allah

Until We Meet Again--The Shahada in Everyday Speech

Long before the presidency of Muhammed Morsi, or the rise of Salafi parties following the uprisings, people in Egypt used to draw my attention to the “Islamization” of public life.   765 more words

Jahiliyah broke my heart.

Ever heard the story about the man in a turban? No? Yes? Don’t worry, this post is not about him but to establish the narrative of Suleiman’s road to Islam I will have to bore you with the turban story, albeit briefly! 1,059 more words

Islam

In Love with My Hijab

I was overwhelmed with joy the moment I became a Muslim. It felt like I was reunited with some sort of priceless treasure, years after a long search.  1,440 more words

Religion

Choosing Islam in Wales: a woman’s path to conversion

A Muslim woman wearing the Niqab – a cloth that covers the face – enters one of the rooms of the Al-Manar Centre, a charity organisation in Cardiff. 1,231 more words

Home