Tags » Cyber Crime

Active tampering is commonplace, says Google

Read more: here, on CNET.

Chris Palmer, a security programmer on Google’s Chrome team, said it last month.

By the way, you really do not want to read the latest Pew report about cyber harassment and cyber bullying, so I am not giving you the link to it.

General Announcements

Twitch Website Hacked - Users are warned to reset their passwords

Video games live streaming website Twitch has been hacked, leaving user account information including credit card details vulnerable.

Twitch users’ accounts have been reset and it does not seem that any credit card or other financial information has been made available. 195 more words

News

Cyberliability governance – early guidance for corporate directors

When confidential personal or medical information is compromised or a computer network is breached, the event is typically described as a “failure” of data or network security. 896 more words

Property & Casualty

Life after Section 66A of the Information Technology Act

While it may have been a major relief that the Supreme Court of India struck down the draconian Section 66A of the Information Technology Act (IT Act), this, however, should not be seen as a license to post anything and everything on the internet. 34 more words

Vicky Nanjappa

سپریم کورٹ نے منسوخ کی دفعہ 66 اے، آن لائن کمینٹ پر فوری طور پر گرفتاری نہیں ہوگی

نئی دہلی:سوشل میڈیا پر متنازعہ کمینٹ پر جس آئی ٹی ایکٹ کی دفعہ 66 اے کے تحت کارروائی ہوتی تھی، اسے سپریم کورٹ نے مسترد کر دیا ہے. سپریم کورٹ نے منگل کو یہ فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ کمینٹ کرنے پر آئی پی سی کی دیگر دفعات کو تحت کارروائی ہو سکتی ہے، لیکن اس دفعہ کے تحت اب معاملہ نہیں چلایا جا سکے گا. اس دفعہ کو منسوخ کئے جانے سے اب کمینٹ کرنے پرفوراََ ہونے والی گرفتاریوں پر روک لگے گی. تاہم، اس کے باوجود کسی بھی شہری کو بغیر-سوجھے سمجھے کچھ بھی کمینٹ کرنے کی آزادی نہیں ہوگی. اس کے خلاف دیگر دفعات کے تحت پولیس کیس چلانے کے قابل ہوگی.

اس دفعہ کا انٹرنیٹ پر خیالات کا اظہار کرنے سے روکنے کے لئے استعمال کئے جانے لگا تھا. حال میں ہی یو پی کے وزیر اعظم خاں کے خلاف کمینٹ کرنے والے ایک طالب علم کو 24 گھنٹے کے اندر اندر اسی دفعہ کے تحت گرفتار کر لیا گیا تھا.

فریڈم آف اسپیچ کے حق کو ملے گی مضبوطی

آئی ٹی ایکٹ کی دفعہ 66 اے کے تحت سپریم کورٹ میں پٹیشن دائر کرنے والی شرےیا سنگھل نے کہا کہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے سے آئین میں ملے فریڈم آف اسپیچ کے حق کو مضبوطی ملے گی. دہلی میں قانون کی طالبہ شرےیا نے کہا، ” اس دفعہ کے تحت پولیس کچھ بھی کمینٹ کرنے پر گرفتار کر سکتی تھی. ملک میں ایسے کئی معاملے دیکھے گئے، لیکن اب ایسا نہیں ہو گا. کسی کو ڈرنے کی ضرورت نہیں ہو گی کہ وہ کچھ لکھے گا تو اسے جیل ہو جائے گی. یہ ہمارے لئے ایک بڑی جیت ہے. ” بتا دیں کہ شرےیا نے شہین اور رکنو شری نواسن کی گرفتاری کے معاملے کے بعد اس سلسلے میں مفاد عامہ کی عرضی دائر کی تھی.

بالا صاحب ٹھاکرے کی آخری سفر کو لے کر سال 2012 میں پالگھر کی شاہین نامی ایک لڑکی نے کمینٹ کیا تھا، جس کے بعد ر?نو نے اسے لائک کیا تھا. شیوسینا کی ناراضگی کے بعد پولیس نے دفعہ 66 اے کے تحت دونوں کو گرفتار کر لیا تھا. سپریم کورٹ کے اس فیصلے پر رکنو نے کہا کہ اب انہیں انصاف ملا. کم سے کم سوشل ویب سائٹ پر لکھنے اور پیغام دینے کی اجازت ہونی چاہئے. گرفتاری کی وجہ رنکنو کی انجینئرنگ کی پڑھائی ایک سال تک متاثر ہوئی تھی.

کورٹ کا نظریہ

جسٹس جے چےلامےشور اور رویٹن نریمن کی بنچ نے اس ایکٹ کو حکومت کی طرف سے غلط کرنے پر فیصلہ سنایا. کورٹ نے کہا کہ آئی ٹی ایکٹ صاف طور پر لوگوں کے جاننے کے حق کی خلاف ورزی کرتا ہے. کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ یہ قانون بہت غیر واضح ہے. یہ ہندوستانی شہریوں کے بنیادی حق کی خلاف ورزی کرتا ہے. اب اس قانون کے تحت کسی کو جیل نہیں بھیجا جا سکتا. سپریم کورٹ نے منگل کے اپنے فیصلے سے پہلے 16 مئی، 2013 کو بھی اس بارے میں انتظامات دی تھی. تب سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ آئی ٹی ایکٹ کے تحت کسی بھی شخص کی گرفتاری آئی جی یا ڈی سی پی جیسے اعلی پولیس افسروں کی منظوری کے بعد ہی کی جائے. دفعہ 66 اے کے غلط استعمال کے خلاف عرضیاں ملنے پر سپریم کورٹ نے یہ ٹپپ? کی تھی. تاہم، تب گرفتاری پر مکمل طور پر روک لگانے سے سپریم کورٹ نے انکار کر دیا تھا.

کیا ہے آئی ٹی ایکٹ کی دفعہ 66 اے

آئی ٹی ایکٹ 2000 میں بنا. لیکن اس میں 2008 میں تبدیلی ہوئے. اس کے بعد دفعہ 66 اے تنازعات میں آ گئی. انپھرمےشن ٹیکنالوجی پر بیسٹ کسی بھی کمیونی میڈیم سے بھیجا جانا والا پیغامات اگر قابل اعتراض، فحش یا اشتعال انگیز ہے تو اس دفعہ کے تحت گرفتاری ہو سکتی ہے. یہ دفعہ ان معاملات میں لگ سکتی ہے-

* کوئی انپھرمےشن جو اشتعال انگیز یا دھمکی بھری ہو.

* ایسی معلومات جو کمپیوٹر ریسورس یا اس سے منسلک ذرائع ابلاغ کا استعمال کر بھیجی گئی ہو اور جس کا مقصد کسی کو ٹھیس کرنا، غیر آرام دہ کرنا، توہین کرنا، نقصان پہنچانا، دھمکانا یا نفرت پھیلانا ہو.

* کوئی ای میل یا میسج جو گمراہ کرتا ہو، غیر آرام دہ کرتا ہو یا دلبرداشتہ کرتا ہو.

* اس دفعہ کے تحت الزام ثابت ہونے پر تین سال کی سزا اور جرمانے کا بھی انتظام ہے.

حکومت نئی گاڈلان کے حق میں تھیروی شنکر پرساد

اس مسئلے پر آئی ٹی اور ٹیلی کام وزیر روی شنکر پرساد نے کہا، ” ہم فریڈم آف سپیچ کے حقوق کا احترام کرتے ہیں. آئی ٹی ایکٹ 66 اے کو لے کر نئے حلف نامے میں حکومت نے کہا تھا کہ اس دفعہ کا استعمال صرف گرفتاری مقصد سے نہیں کیا جا سکتا. حکومت اس دفعہ کا غلط استعمال روکنے کے لئے اضافی گاڈلاس بنانے کے بارے میں بھی کہہ چکی ہے. خیالات کے تبادلے کے حقوق کو احترام کرتے ہیں، صرف تنقید ہی جرم کا سبب نہیں بن سکتی. ” انہوں نے کہا کہ اس معاملے میں جتنی درخواستوں پر سپریم کورٹ میں سماعت ہو رہی تھی وہ ساری پہلے کی حکومت کی مدت کار میں لائی گئی تھیں. اس دفعہ کا مقصد لکھنے کی آزادی کو روکنے کے لئے نہیں کیا جانا چاہئے. مودی حکومت میڈیا، سوشل میڈیا پر لگام لگانے کی خواہش مند نہیں ہے. بتا دیں کہ سپریم کورٹ میں اس مسئلے پر مرکزی حکومت نے یقین دلایا تھا کہ ملک میں آئی ٹی کی دفعہ 66 اے کا غلط استعمال نہیں ہو، اس کے لئے کوششیں کی جائیں گی. حکومت نے اس سلسلے میں تمام ریاستی حکومتوں کو خط لکھ کر اس دفعہ کے تحت آنا فانا میں گرفتاری نہ کرنے کو کہا تھا. اس کے باوجود گزشتہ دنوں یوپی میں اعظم خاں پر کمینٹ کرنے پر ایک لڑکے کی گرفتاری ہوئی تھی. سپریم کورٹ نے یہ کہتے ہوئے مرکزی حکومت کی دلیل کو مسترد کر دیا کہ اگر معاملہ ایکےٹ سپیچ کا ہے تو دیگر دفعات کے تحت کارروائی کریں.

ممتا سے لے کر اعظم خاں کے لئے پولیس نے کیا تھا اس دفعہ کا استعمال

اس دفعہ کے تحت پولیس کو انٹرنیٹ پر کسی بھی کمینٹ یا کچھ بھی لکھنے پر گرفتاری کا حق تھا. پولیس نے کئی بڑی سیاسی شخصیات پر کمینٹ کرنے پر اس قانون کے تحت سوشل سائٹ یوزرس کی گرفتاری کی تھی. گزشتہ دنوں اترپردیش میں اعظم خاں کے خلاف فیس بک پر ایک کمینٹ کو لے کر پولیس نے ایک طالب علم کو گرفتار کیا تھا. اسی طرح انا تحریک سے وابستہ رہنے والے اسیم ترویدی نے فیس بک پر مرکزی حکومت کے خلاف ایک کارٹون شائع کیا تھا، جس کے بعد انہیں اسی دفعہ کے تحت گرفتار کیا گیا تھا. بال ٹھاکرے پر کمینٹ کی وجہ 2012 میں دو لڑکیوں شاہین اور رکنو کی گرفتاری ہوئی تھی. 

Urdu

Internet freedom at last: Section 66 A of IT act struck down

The Supreme Court today struck down the validity of Section 66 A of the Information Technology (IT) Act terming it as unconstitutional.

The act which was termed as draconian in nature was grossly misused by the law enforcement agencies to carry out arrests for posting objectionable material on the internet. 8 more words

Vicky Nanjappa

Vulnerability with Cisco IP Phones

A critical vulnerability in the firmware of Cisco small business phones lets an unauthenticated attacker to remotely eavesdrop on private conversation and make phone calls from vulnerable devices without needing to authenticate, Cisco warned. 344 more words

Hacking