Tags » Imran Khan

عمران خان یہودیوں کا ایجنٹ ہے

عمران
خان یہودیوں کا ایجنٹ ہے اور یہ تصدیق شدہ بات ہے کیونکہ عمران خان نے
یہودیوں کے گھر سے شادی کی،

عمران خان کے بچے یہودیوں کے گھر پل رہے ہیں، …

Blogger

In General Elections PTI to Replace PPP

The Pakistan people’s party members are now shifted to Pakistan Tehreek-e-Insaf it is expected that the vote bank of PPP is moved towards PTI. One of the reason is that the current conflict between Babar Awan the main pillar of Pakistan People’s Party and Co-Chairman Asif Ali Zardari, Awan left PPP to join the Pakistan Tehreek-e-Insaf. 194 more words

General Election

پی ٹی آئی کے رکن خیبر پختونخواہ اسمبلی جناب جاوید نسیم پاکستان مسلم لیگ میں شامل

 

پی ٹی آئی کے موجودہ ایم پی اے اور پارلیمانی سیکرٹری جاوید نسیم پاکستان مسلم لیگ میں شامل، سب مسلم لیگ کے پلیٹ فارم پر آئیں: چودھری شجاعت حسین، پرویزالٰہی

Video Link

نیک نیتی سے کام کررہے ہیں، ن لیگ اور دوسری جماعتوں والے بھی آئیں سب کو عزت ملے گی، انتخابی اتحاد وقت پر دیکھیں گے

عام اور غریب آدمی کیلئے 5سال میں جو کیا ن لیگ اپنے 23 سال کا ایسا ایک کام بتا دے: میڈیا سے گفتگو

لاہور/اسلام آباد(17اپریل2018) پشاور سے پاکستان تحریک انصاف کے موجودہ رکن کے پی کے اسمبلی اور پارلیمانی سیکرٹری جاوید نسیم نے اپنے ہزاروں ساتھیوں اور ووٹروں سمیت پی ٹی آئی چھوڑ کر پاکستان مسلم لیگ میں شمولیت کا اعلان کیا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ کے صدر و سابق وزیراعظم چودھری شجاعت حسین اور سینئرمرکزی رہنما و سابق نائب وزیراعظم چودھری پرویزالٰہی نے ان کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے مسلم لیگ کا ایک پلیٹ فارم بنایا ہے، ن لیگ سمیت تمام جماعتوں والوں کو اس میں آنے کی دعوت ہے، ہم نے نیک نیتی سے کام کیا، کر رہے ہیں اور کرتے رہیں گے، اپنے گھر اور مسلم لیگ کے دروازے سب کیلئے کھول دئیے ہیں، نئے آنے والوں کو بھی عزت و احترام ملے گا، پاکستان مسلم لیگ کام اور ڈیلیور کرنے والوں کی جماعت ہے، پنجاب میں ہم نے پانچ سالہ اقتدار کے دوران عام اور غریب آدمی کیلئے جو کام کیے ن لیگ اپنے اقتدار کے 23 سال میں اس طرح کا ایک کام دکھا دے۔ چودھری شجاعت حسین نے میڈیا سے گفتگو میں مزید کہا کہ جو میں کہتا ہوں وہ کتاب میں لکھا اور سب سچ لکھا، جن کے متعلق لکھا کسی نے نہیں کہا کہ غلط لکھا، میں نے دین و ایمان کے مطابق تمام چیزیں ٹھیک لکھیں، لوگ کہتے ہیں کہ دروازے کھول رہے ہیں ہم نے اپنا گھر کھول رکھا ہے، نیک نیتی سے کام کر رہے ہیں اور کرتے رہیں گے، جاوید نسیم نے جس جماعت کو چھوڑا وہ حکومت میں ہے، کل پشاور سے کچھ لوگ آئے اور کہا کہ ہمارے سے پوچھے بغیر صوبے میں صدر اور سیکرٹری نہ بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ جب این آر او بنا لیا تو پھر پرویزمشرف نے مجھے بتایا، میں نے لکھے ہوئے این آر او کو صرف پڑھا اس میں 3 ہزار لوگوں کو معاف کیا گیا، میں نے صدر صاحب کو اپنے پانچ سال کا پیریڈ نکالنے کو کہا کہ ہمارا احتساب ہونے دیں، اگر ہمارے کسی بندے نے کچھ کیا ہے تو وہ عدالتوں میں پیش ہوں گے، اللہ کا شکر ہے کہ ہمارے اوپر کوئی الزام ثابت نہیں ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے تحریک انصاف کی وکٹ گرا کر کوئی دشمنی نہیں کی، انتخابات میں سیاسی اتحاد وقت پر دیکھیں گے۔ چودھری پرویزالٰہی نے کہا کہ ہم نے مسلم لیگ کا ایک پلیٹ فارم بنایا ہے تمام جماعتوں او رن لیگ کو بھی اس میں آنے کی دعوت دی ہے، 2011ء میں جنوبی پنجاب صوبہ کی آواز ہم نے اٹھائی۔ انہوں نے ایک سوال پر لغاری برادران کو اپنے بچے قرار دیا اور کہا کہ یہ بچے اب بڑے ہو گئے ہیں، میں نے اپنے دور میں ترقیاتی بجٹ جنوبی پنجاب کی طرف موڑا، بطور وزیراعلیٰ ہر ہفتے جنوبی پنجاب کا دورہ کرتا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ نوازشریف سے ملاقات کیلئے چلتی پھرتی شخصیت آئی لیکن اس کو سنجیدہ نہ لیں۔ انہوں نے کہا کہ ن لیگ کے لوگ عدلیہ کے خلاف پراپیگنڈہ کر رہے ہیں، یہ عدالتوں کے اوپر حملے کر کے بھی بچتے رہے، شہبازشریف قیمے والے نان کھلانے کا اعلان سپیکر میں کر رہے تھے میں اس وقت سپیکر پنجاب اسمبلی تھا۔ چودھری پرویزالٰہی نے مزید کہا کہ پشاور سے آنے والوں کا اور ہمارا ہمیشہ ساتھ رہے گا، اب کے پی کے میں پاکستان مسلم لیگ کی بہترین ٹیم ہے، دنوں میں رزلٹ سامنے آئے گا، لوگ پیسوں کیلئے لیکن ہم عزت اور عوام کی خدمت کیلئے سیاست میں آئے ہیں، نوازشریف نے ہمیں خود پارٹی سے نکالا، لوگ اب سمجھ گئے ہیں ان کے پاس دینے کیلئے عزت ہی نہیں اس لیے لوگ چھوڑ رہے ہیں، ہمارا سلوگن عام اور غریب آدمی تھا ہم کسی کو نہیں چھوڑتے وزیر خود چھوڑ کر گئے تو انہیں کہا کہ سدا اقتدار نہیں رہتا، 10 سال میں بہت سیکھا ہے۔ جاوید نسیم ایم پی اے نے کہا کہ پاکستان مسلم لیگ مجھے ریاست کے ساتھ مخلص جماعت نظر آئی، اب اسی جماعت سے الیکشن لڑوں گا، میں نے شمولیت سے قبل اپنے ساتھیوں، ووٹرز اور سپورٹز کو اعتماد میں لیا اور انشاء اللہ اپنے حلقے میں پہلے کی طرح مسیحا بن کر اپنا مشن جاری رکھوں گا۔

Team Moonis Elahi

Pakistan

LHC bans airing 'anti-judiciary' speeches of Nawaz, Maryam

LAHORE: The Lahore High Court (LHC) has banned airing anti-judiciary speeches of ousted prime minister Nawaz Sharif, his daughter Maryam Nawaz and other PML-N leaders and directed media regulator to decide the matter within 15 days. 81 more words

News

پاناما فوبيا جي مريض بڻيل ملڪي رياست ـ ماهم سنڌي

 چوندا آهن ڪنهن به شيء جو ڊپ ، وهم يا ڪنهن شيء جو ڏهڪاءُ بيهجي وڃي ته اهو بيماري جو روپ وٺندو آهي. اها بيماري جنهنکي عام ماڻهو چريائپ جو نالو ڏئي ٿو يا ان ماڻهو تي جنن ڀوتن جو سايو ڪوٺي ٿو. پر ميڊيڪل سائنس جي تحقيق موجب اها هڪ دماغي بيماري آهي، اگر ڪنهن شخص کي مخصوص شيءَ مان حد درجي جو ڀئون ٿئي ته سمجهجي ته ان شخص کي ان شيءُ جو فوبيا ٿي ويندو آهي. عام طور تي فوبيا جو مريض انهن شين کان خوف ڪندو آهي، جيڪي درحقيقت ايڏيون خوفناڪ ۽ نقصانڪار ناهن هونديون. فوبيا جا مريض پاڻ اعتراف ڪن ٿا ته اسان جو پنهنجي خوف تي ۽ وهم سان ڀريل دماغ تي ڪو ڪنٽرول ناهي. مريضن جا انهي خوف جي صورتحال ۾ هٿ ۽ سڄو جسم ڪنبڻ لڳندو آهي ۽ ساھ پڻ تيز ٿي ويندا آهن. جئين ته ڪي ماڻهو پاڻي کان خوف ڪندا آهن ته ڪي باھ کي ڏسي ڏڪڻ شروع ٿي ويندا آهن. ڪي وري جانورن کان ڊڄندا آهن ته ڪي بلند عمارتن کي ڏسي دل جو تيز ٿي وڃڻ روڪي ناهن سگهندا. ڪن ماڻهن کي اونداھ مان ته ڪن کي موت جو فوبيا ٿي پوندو آهي. ڪنهن کي عشق جو فوبيا ته ڪنهنکي بيماري نه هئڻ سبب به ، اهو فوبيا رهندو آهي ته آئون بيماري ۾ مبتلا آهيان . ڪنهنکي غربت جو فوبيا ته، ڪنهن کي وري غريبن مان فوبيا ٿي ويندو آهي ۽ ڪو غريب يا فقير روڊ رستي تي ڏسي هڪدم منهن خراب ڪري ٻه وکون پوئتي ڪندا آهن . آمريڪي صدر ڊونلڊ ٽرمپ جي چونڊ نتيجن بعد به ان کي فوبيا ٿي پيو هو ته آئون آمريڪا جو ۽ سڄي دنيا جو ناپسنديده صدر آهيان ۽ هن انهيء ڊپ ۾ اچي سخت قانون لاڳو ڪيا، هن ويزا پاليسي ۾ سختي ڪئي هو محبت ماڻڻ لاء سعودي عرب وڃي پهتو . پاڪستان ۽ ڀارت ٻنهي دشمن ملڪن کي ڪشمير فوبيا چوٽ چڙهيل آهي، جنهن ڪري اهي ٻئي سوچين ٿا متان ڪشمير اسان جي هٿن مان نڪري وڃي ، تنهن ڪري ٻنهي ڌرين پاران پنهنجي قوت آهر مار ڌار جاري آهي، جنهن ڪري عام ڪشميري روز موت جي ننڊ سمهن ٿا. اهڙي ئي قسم جو مرض اسرائيلي وزيراعظم نيتن ياهو کي لڳل آهي ، جيڪو فلسطينن جي آزادي واري مهم کان ڊڄندي انهن جو قتل عام ڪرائي رهيو آهي . ان وانگر تحريڪ لبيڪ پاڪستان جي سربراهه مولانا خادم رضوي کي فوبيا ٿي پيو ته ڪٿي منهنجي شهرت ۾ گهٽتائي نه اچي، انهي ڊپ ۾ اچي ان هڪدم ختم نبوت کي تلوار بڻائي فيض آباد لڳ ڌرڻو هڻي سڄي رياست کي مُلا فوبيا ۾ مبتلا ڪري ڇڏيو ـ

عمران خان کي اليڪشن جي بعد ڌنڌالي فوبيا وڏي پيماني تي ٿيو ، ڪن چواڻين موجب بينظير ڀٽو شهيد جي حڪومتي عرصي دوران آصف زرداري کي پڻ ڀٽو فوبيا ٿي پيو هو. پر ان جو ازالو آصف زرداري ڀٽوز جون تعريفون ۽ نعرا لڳائي خوب انداز ۾ ڪري رهيو آهي . پر ڳالھ ڪجي ملڪ ۾ موجود ان فوبيا جي جنهنجي لٺ جي سهاري هن دفعي جي چونڊيل وزيراعظم کي ، پراڻي روايت قائم رکندي مدو پورو ڪرڻ نه ڏنو ويو . جيء ها اوهان پڙهندڙ سهي پيا سمجهو ، آئون پناما فوبيا جي ڳالھ ٿي ڪريان ، جنهن جي نالي کان اڄڪلھ هر ننڍو وڏو بخوبي واقف آهي . اپريل 2016ع تي پناما پيپرز جاري ٿيا، جنهن ۾ اٺ آف شور ڪمپنين جو تعالق نواز شريف ۽ سندس خاندان سان ڄاڻايو ويو . ان پاناما ليڪس ۾ جڏهن غير قانوني آف شور ڪمپنين جي مالڪن ۾ نواز شريف جي ٻن پٽن حسن ۽ حسين نواز ۽ ڌي مريم صفدر جو نالو ظهور پذير ٿيو ، تئين هر پاسي وٺ پڪڙ پئجي وئي ته اهو مُهرو وزيراعظم کي فارغ ڪرڻ لاء سهي رهندو . انکان علاوه ملڪي شاندار روايت به قائم رکڻي هئي ، جنهن موجب ڪو به وزيراعظم پنهنجو مقرر ڪيل 5 سالا مدو پورو نه ڪري سگهي. پاناما جي پلو مڇي مخالفن لاء ڏاڍي لذيذ هئي. پاناما جي آيل رپورٽ هڪدم اسٽيبلشمينٽ، ملڪ جي سياسي ۽ عسڪري واڳ پنهنجي هٿ ۾ سوگهي رکندڙ غير سول ادارن کي ڄڻ ته سوني جهرڪين جا قابو ۾ اچڻ جا خواب ڏيکاري ڇڏيا. جنهن سوني جهرڪي ذريعي چونڊيل وزيراعظم کي گهر ڀيرو ڪرڻ صفا سولو نظر پئي آيو . ڄڻ ته اهي پناما ليڪس انهن جي گهريل دعائن ۽ ڪيل جدوجهد جو نتيجو هئي. وزيراعظم کي گهرڀيرو ڪرڻ لاء پاناما کان اڳ پهرين ترڪيب تي عمل ڪندي عمران خان کي سياسي طور اڀاريو ويو . عمران خان جنهن جو صرف اهو ئي مطالبو هيو ته 2013 جي چونڊن ۾ ڌانڌلي ٿي آهي ، جيڪا بعد ۾ ووٽر لسٽون کُلڻ سان به مڪمل طور ثابت به نه ٿي هئي ، ان جو جواز ڄاڻائيندي هن کي اسلام آباد جي ڊي چوڪ تي ڌرڻي لاء ائين تيار ڪيو ويو، جئين ڪا ڪنوار ساهرن جي گهر وڃڻ کان اڳ ٿيندي هجي. ان نيڪ ڪم ۾ سندس سياسي سؤٽ علامه طاهر القادري به ڪلهو ڪلهي سان ملائي بيٺل رهيو . ٻنهي سياسي ڀائرن گڏجي 2 مهينن تائين اسلام آباد جي انتهائي اهم چوڪ، جٿان پارليامينٽ هائوس آهي ، جٿان ملڪ جي وڏي عدالت سپريم ڪورٽ آهي ، اتي ڌرڻو لڳائي ويهي رهيا. اتي عام ماڻهن جا ڪاروبار سڙهائي انهن کي ويهاريو ويو ۽ گانن تي رقص ڪرايو ويو . ان سڀ پويان اصل مقصد اهو هو ته وزيراعظم کي مُدو پورو ڪرڻ نه ڏنو وڃي. جڏهن امپائر جي آڱر وارو اهو ڊرامو ناڪام ويو ته، قومي سلامتي اداري جي ڏنل بريفنگ (جنهن ۾ فوج ۽ طالبانن بابت اهم انڪشاف ٿيل هيا) اها جڏهن هڪ صحافي سرل اميڊيا پاران ليڪ ڪئي وئي ته فوج ان معامري تي وزيراعظم مٿان ڏمرجي پئي. ائين پئي لڳو ڄڻ ڊان ليڪس جي خبرن جي ڪاوڙ وزيراعظم کي فارغ ڪري ڪڍي ويندي . پر ان ڀيري نواز ليگ ڏاهپ جو ڏانءُ ڏيکاريندي نواز شريف بدران قرباني وفاقي وزير اطلاعات پرويز رشيد جي ڏني. پر اڃا وزيراعظم نواز شريف کي ڪڍڻ جو اصل مقصد اڻ پورو هو. نيٺ پاناما جي آمد ٿي ائين لڳو ڄڻ پاڪستان جي اصل خالقن جي الله ٻڌي. وري عمران خان کي ڊرامي جي سيزن 2 ۾ آفر ڏئي منظر عام تي روڊن تي آندو ويو . ان ڊرامي جي اسڪرپٽ لکجي چڪي هئي ۽ ان تي عمل پيرا ٿيڻ کي عمران خان پنهنجو انساني فرض سمجهيو . ان لکيل اسڪرپٽ تحت نومبر 2016ع ۾ سپريم ڪورٽ پاڻمرادو نوٽيس وٺندي پاناما ڪيس هلايو ، جنهن ۾ نواز شريف خلاف مني لانڊرنگ ۽ ڪرپشن جا الزام هيا ۽ اهو ڪيس پاناما ڪيس جي نالي سان شهرت ماڻڻ لڳو . سال 2017ع تي پاناما ڪيس جي ٻڌڻي دوران سپريم ڪورٽ پاران وڌيڪ تحقيقات لاء جوائنٽ انويسٽيگيشن ٽيم (جي آء ٽي) جوڙي وئي . ان تحقيق دوران ان ٽيم وٽ شريف فيميلي جون پيشيون واري واري سان ٿينديون رهيون . آخري فيصلي واري ڏينهن 28 جولائي 2017ع تي سپريم ڪورٽ طرفان چونڊيل وزيراعظم کي ڏوهي قرار ڏيندي ، پاناما جي ڪيس تي اقاما جو فيصلو ڏيندي کيس نا اهل ڪيو ويو . سپريم ڪورٽ جي 5 ججن اهڙو ته فيصلو ڏنو جنهن ۾ ملڪ جي ڏيهه توڙي پرڏيهه ۾ بدنامي ٿي . اهي ڌريون جن ڪڏهن به وزيراعظم کي 5 سال ان عهدي تي رهڻ نه ڏنو، اهي نيٺ فتحياب ٿي ويا .هي اها ئي عدالت هئي جنهن ملڪ جي چونڊيل وزيراعظم ذوالفقار علي ڀٽي کي ڦاهي جي سزا ٻڌائي هئي. پاناما جي فيصلي تي بيشڪ سزاوار نواز شريف جي اولاد کي ڪيو وڃي ها ، پر پاناما جي آڙ ۾ نڪتل دشمني ڪڍي ججن ڌُر بڻجي فيصلو ڏئي ، اهو ثابت ڪيو ته انصاف نه صرف انڌو پر گونگو ۽ ٻوڙو پڻ هجي ٿو . پاناما فيصلي ذريعي صرف مخالف اڳواڻن کي نه پر ملڪي اسٽيبلشمينٽ ۽ ملڪي فوج کي پڻ خوش ڪيو ويو . ڊان ليڪس معامري کان وٺي مختلف معامرن تي رُٺل فوج توڙي اسٽيبلشمينٽ سان اٽڪاءُ نيٺ پاناما پار اچي پهتو ـ

پاناما جو فيصلو ڏيارڻ وارا انهي هُش ۾ خوش آهن ته هو ان ذريعي نواز شريف کي هميشه لاء نا اهل ڪري کيس سياسي شڪست ڏيندا . بيشڪ نواز شريف جو نا اهل ٿيڻ نواز ليگ لاء ڪنهن دل جي دوري کان گهٽ ڪين هو، پر اتي اهو نڪتو به اهم آهي ته پاناما ڪيس ۾ ڪاميابي تي مخالف جماعتون ۽ دشمن قوتون پنهنجي سوڀ سمجهي رهيون آهن ، اهي هاڻي لازمي ڏسندا هوندا ته پاناما ڪارڊ نواز ليگ کي شڪست سان گڏ عوام جي همدردي ڏني ، جيڪا هڪ سياسي جماعت لاء انتهائي اهم آهي . پاناما فيصلي بعد اڳوڻي وزيراعظم نواز شريف جي شروع ڪيل مهم “ مجهي ڪيون نڪالا“ عوام اندر ايڏي مقبول ٿي وئي آهي ، جو پنجاب جو عوام ته نواز ليگ سان قدم سان قدم ملائي بيٺو آهي. اهي ڪنهن ڪپتان خان يا زرداري کي جڳهه ڏيڻ لاء هرگز راضي ناهن ، پر هو هاڻي پنهنجي پنجابي اڳواڻ نواز شريف سان بيهي ان جي لامشروط حمايت ڪري رهيا آهن. عدالتن جا هڪ طرفا منصوبابندي سان آيل فيصلا ۽ نواز شريف جي پيشين عوام کي سندس همدرد بڻائي ڇڏيو آهي. سندس زال ڪلثوم نواز جيڪا موتمار بيماري ۾ مبتلا آهي، ان ڏي وڃڻ جو اجازتنامو نه ڏيڻ پڻ ججن کي متنازع بڻائي رهيو آهي. جتي ملڪ جي وڏي عدالت ٻيا عوام جا ايترا ڪيس اڪلائڻ ۽ ٻڌڻي لاء سالن کان وقت نه ڪڍيو آهي، اتي پاناما تي تڪڙا فيصلا ڏيڻ پڻ ججن جو ٻٽو معيار ظاهر ڪري ٿو . هاڻي سگهوئي ايندڙ الڪيشن ۾ جيڪر نواز ليگ وڏي اڪثريت سان پنجاب جي عوام جو همدردي ووٽ حاصل ڪرڻ ۾ ڪامياب ٿي ويندي ته، پاناما فوبيا ۾ مبتلا مخالفن تي ان بيماري جا انتهائي ناڪاره اثر پوندا ، جن جي شروعات ته ٿي ئي چڪي آهي . چون ٿا ڪنهن به فوبيا جو علاج 6 مهينن تائين ٿي سگهي ٿو، پر نواز ليگ جيڪر مرڪز ۾ حڪومتي واڳون ٻيهر سنڀاليون ته ممڪن آهي پاناما فوبيا ايندڙ پنجن سالن تائين سياستدانن جي نفسيات تي حاوي رهي ـ

Columns

دیکھیں کیا گزرے ہے قطرے پہ گہر ہونے تک

(تجزیہ:۔۔۔ قدرت اللہ چودھری)
یوسف رضا گیلانی جب وزیراعظم تھے تو ایک موقع پر انہوں نے کہا تھا اگر پیپلز پارٹی کے دور میں جنوبی پنجاب صوبہ نہ بنا تو کب بنے گا؟ پھر یوں ہوا کہ ان کی وزارت عظمیٰ، سپریم کورٹ کے ایک فیصلے کی نذر ہوگئی، ان کی جگہ راجہ پرویز اشرف وزیراعظم بنے، پیپلز پارٹی کی حکو مت 2013ءمیں ختم ہوگئی لیکن جنوبی پنجاب صوبہ نہ بن سکا۔ الیکشن مہم میں صوبے کا نعرہ تو بہت لگایا گیا، لیکن اس نعرے کو پذیرائی نہ مل سکی ، اگر ملتی تو پیپلز پارٹی کو پورے پنجاب میں قومی اسمبلی کی ایک نشست تو حاصل نہ ہوتی وہ بھی پارٹی سے زیادہ مخدوم احمد محمود کی اپنی کاوشوں کا نتیجہ تھی، اس الیکشن میں کامیابی مسلم لیگ (ن) کو ملی جس نے کبھی جنوبی پنجاب کیلئے الگ صوبے کا نعرہ نہیں لگایا البتہ پنجاب کی حکومت نے گزشتہ دس برسوں میں جنوبی پنجاب کیلئے بجٹ بہت بڑھا دیا ہے۔ دانش سکول جنوبی پنجاب کے پسماندہ اضلاع میں قائم کئے گئے ہیں۔ مظفر گڑھ میں سٹیٹ آف دی آرٹ ہسپتال بنایا گیا، سڑکوں کا جال بھی پھیلایا گیا ہے، ملتان میں سبسڈائزڈ میٹرو بس چل رہی ہے۔ مخالفین کہتے ہیں یہ بسیں خالی دوڑتی ہیں غالباً ان کی تسلی اسی وقت ہوتی ہے جب مسافر بھیڑ بکریوں کی طرح ٹھونس دیئے گئے ہوں اور چھتوں پر بھی سفر کرنے پر مجبور ہوں، چونکہ میٹرو میں ایسا نہیں اسلئے یہ ہدف ملامت ٹھہری۔ جن بسوں میں دو چار نشستیں خالی ہوں یا کھڑے ہونے کی گنجا ئش ہو وہ انہیں خالی نظر آتی ہیں۔کہا جاتا ہے ملتان میں میٹرو کی ضرورت نہ تھی یہ کرپشن کیلئے بنائی گئی۔ اس سلسلے میں جوسکینڈل بنایا گیا وہ بیک فائر کرگیا تھا اور چین کی حکومت نے جعل سازی کرنےوالی کمپنی کو بلیک لسٹ کردیا ہے۔ اس کے باوجود پروپیگنڈے کا سلسلہ رک نہیں پا تا ، عام طور پر ہمارا رویہ یہ ہوگیا ہے کہ اگر دانش سکول بنایا جائے تو کہا جاتا ہے پرائمری سکول بننا چاہئے تھا۔ جنرل ہسپتال بنایا جائے تو کہا جاتا ہے دل کا ہسپتال کیوں نہیں بنایا گیا۔ موٹر وے بنائی جائے تو کہا جاتا ہے اس کی ضرورت نہ تھی اس کی بجائے فلاں سڑک بنا دی جاتی۔ غرض حکومت کی ترجیحات اپنی ہیں اور لوگوں کی پسند ناپسند کے پیمانے بھی اپنے ہیں۔ یہ تو خیر جملہ معترضہ تھا ہم نے بات جنوبی پنجاب کے صوبے کے مطالبے سے شروع کی تھی جسکی پیپلز پارٹی سب سے زیادہ حامی ہے۔ اب الیکشن مہم میں یہ نعرہ شدومد سے لگایا جا رہا ہے، تحر یک انصاف بھی صوبے کی حامی ہے، جنرل پرویز مشرف کی کابینہ میں وزیر اطلاعات محمد علی درانی بہاولپور کو صوبہ بنانے کے خواہشمند ہیں۔ جنوبی پنجاب میں بہاولپور شامل ہے یا نہیں اور اگر جنوبی پنجاب صوبہ بن گیا تو کیا بہاولپور صوبے کا مطالبہ پھر بھی جاری رہے گا اس کی وضاحت محمد علی درانی کے ذمے ہے۔ اب جنوبی پنجاب صوبے کی تحریک میں ایک نیا موڑ آیا ہے۔ مسلم لیگ (ن) کی حکومت کا پورے چار سال دس ماہ تک حصہ بنے رہنے والے چند ارکان نے علیحدہ ہوکر ایک صوبہ محاذ بنانے کا اعلان کیا ہے۔ معترضین کہہ سکتے ہیں اب تک ان کے دل میں صوبے کی محبت کیوں نہیں جاگی تھی لیکن نیک کام جب بھی کرلیا جائے اچھا ہوتا ہے اسلئے اگر طویل عرصے سے بھولے ہوئے یہ راہی جنوبی پنجاب کے راستے پر واپس آگئے ہیں تو ان کا خیرمقدم ہی کیا جانا چاہئے لیکن ایک خدشہ موجود ہے کہ جس طرح پیپلز پارٹی کی حکومت صوبے کے مطالبے سے ہمدردی رکھنے کے باوجود آج تک صوبے کیلئے عملاً کوئی کام نہیں کرسکی اسی طرح یہ محاذ بھی کامیابی حاصل نہیں کرسکے گا کیو نکہ اگر ملک کی ایک بڑی جماعت اس مشکل کام کو نہیں کر پائی تو چند آزاد ارکان کیسے یہ منزل حاصل کر پائیں گے۔ ایسے لگتا ہے سیاسی وجوہ کی بنا پر یہ حضرات پارٹی چھوڑنا چاہتے تھے تاکہ اگلے سیٹ اپ میں کوئی جگہ مل سکے۔ کہا جا رہا ہے 2018ءکے انتخاب کے بعد آزاد ارکان کی اسی طرح لاٹری نکلنے والی ہے جس طرح بلوچستان کے آزاد ارکان کی نکلی تھی، وہاں بھی مسلم لیگ (ن) کے ٹکٹ پر منتخب ہونےوالوں نے اپنی حکومت کےخلاف بغاوت کردی اور نواب ثنا اللہ زہری کو ہٹا کر ان کی جگہ مسلم لیگ (ق) سے تعلق رکھنے والے عبدالقدوس بزنجو کو وز یر اعلیٰ بنا دیا۔ جن کے اپنے ارکان پانچ ہیں۔ اس طرح ایک ”آزاد“ سینیٹر ایوان بالا کا چیئرمین بن گیا۔ غالباً ایسی کرشمہ سازیوںکو دیکھ کر ہی جنوبی پنجاب کے ہمارے چند دوستوں کے دل میں صوبے کی محبت جاگ اٹھی ہے اور انہوں نے ایک محاذ بنالیا ہے، اب دیکھیں قسمت کس طرح یاوری کرتی ہے۔
پیپلز پارٹی نے تو اپنے دور حکومت میں قومی اسمبلی سے جنوبی پنجاب صوبے کے حق میں قرارداد بھی منظور کرالی تھی لیکن صوبہ کیسے بن سکتا تھا کہ اس کیلئے قومی اسمبلی نہیں، صوبے کی اسمبلی کا کردار اہم ہے اور مطلوبہ اکثریت پیپلز پارٹی کے پاس نہ اس وقت تھی اور نہ ہی 2013ءمیں مل سکی۔ اب آصف علی زرداری صوبے کی حکومت کے حصول کیلئے پرامید ہیں جو اسی صورت قائم ہوسکتی ہے جب مسلم لیگ (ن) اور تحر یک انصاف کو بیک وقت شکست دی جائے۔ ممکن ہے پیپلز پارٹی نے کوئی ایسا زائچہ بنایا ہو جس میں یہ دونوں جماعتیں کوئی وجود نہ رکھتی ہو ں ۔ اگر ایسا ہوگیا تو بھی جنوبی پنجاب کا صوبہ بننا محض نعروں سے ممکن نہیں۔ اگر ایسا کرنا آسان ہوتا تو بلوچستان میں پشتون صوبہ، خیبر پختو نخو ا میں ہزارہ صوبہ اور سندھ میں کراچی صوبہ اب تک خواب و خیال سے آگے بڑھ چکا ہوتا۔ ویسے خوشی کی بات ہے الیکشن سے ذرا پہلے صو بے کے نام پر ایک محاذ تو بنا ،دیکھیں کیا گزرے ہے قطرے پہ گہر ہونے تک۔
جنوبی پنجاب صوبہ محاذ میں جو سیاستدان شریک ہوئے ہیں ان میں ایک قدر مشترک یہ ہے کہ وہ کسی نہ کسی سیاسی جماعت کو چھوڑ کر مسلم لیگ (ن) میں شامل ہوئے تھے۔ چونکہ حکومت اس کی تھی اور ان حضرات کی سابق جماعتیں اپنے اقتدار کا دور پورا کرچکی تھیں اسلئے انہوں نے برسر اقتدار جماعت میں شمولیت ضروری سمجھی اب یہ پرندے کسی ایسے ٹھکانے کی تلاش میں ہیں جسے اقتدار ملنے کی امید ہو، رہا صوبے کا معاملہ تو اس کی حیثیت نعرے سے زیادہ کچھ نہیں ہے۔

Analysis