Tags » Interview » Page 2

In Retrospect.

Without further adieu, I give you a selection of everything that I’ve worked on this year.

As December slowly passes by, I can’t help but feel so thankful for all of the projects that I’ve involved myself in, all of the new friends I’ve made, all of the traveling I did, and everything in between. 716 more words

Photography

Petra Collins on the Power & Pain of coming of age

The photographer’s new work is a scrapbook of human emotion.

(All photography courtesy Petra Collins/ Rizzoli)

We’re at Dimes, and Petra Collins is devouring a bagel. 1,073 more words

Photographer

From Self-Publishing to Big Time Success; Interview With Author James Oswald.

From writing one of the best selling crime fiction series, to writing a fantasy series about dragons and magic, Scottish author and livestock farmer James Oswald has created two completely different novel series’ that offer bold and rich takes on their respective genres. 5,533 more words

Interview

Interviews and Excerpts

Round-up of latest media appearances.

Over at Working Title Blogspot, EM Swift-Hook and Jane Jago (whose novella I loved) granted me an interview. They asked only three questions, but ones that were completely outside the normal selection I see with author interviews: 295 more words

Writing

نوکری کیلئے انٹرویو میں کامیابی کے گُر

(سید اویس مختار)
کسی بھی ملازمت سے قبل انٹرویو سب سے اہم مرحلہ ہوتا ہے جس میں ایک اسامی کا ا±میدوار کمپنی یا ادارے کے نمائندوں کے سامنے مو جو د ہوتا ہے، یہ موقع ا±س کےلئے نہایت اہم ہوتا ہے کیونکہ ا±س موقع کا صحیح استعمال کرکے وہ اپنے آپ کو نوکری کےلئے اہل ثابت کرسکتا ہے۔
کئی ا±میدوار یہ شکوہ کرتے نظر آتے ہیں کہ وہ انٹرویو میں بہت اچھی تیاری کرکے گئے تھے مگر انٹرویو میں پوچھے جانے والے سوالات ایسے تھے جن کا جواب ا±ن سے بروقت نہ بن سکا۔ کچھ ا±میدواران انٹرویو کے موقع پر یک دم پریشانی اور کنفیوژن کا شکار ہوجاتے ہیں، بعض لوگ دوران انٹرویو بہت کچھ کہنا چاہتے ہیں مگر ا±س وقت نہیں بول پاتے، جبکہ کئی تو حد ہی کردیتے ہیں اور اپنی موجودہ نوکری کے حوالے سے مشکلا ت کا وہ رونا روتے ہیں کہ جس کی مثال نہیں ملتی۔
اِس کارگزاری کے بعد جب ا±ن کو انٹرویو کرنے والی کمپنی کی جانب سے جوابی بلاوا نہیں آتا تو ا±س میں کوئی اچھنبے کی بات نہیں، آپ نے انٹر ویو میں کارکردگی ہی ایسی دکھائی ہے کہ ا±س کے بعد کوئی توقع رکھنا ہی فضول ہے، مگر اچھی خبر یہ ہے مندرجہ ذیل چند نہایت سادی سی ہدایات پر عمل کرکے آپ یہ نتائج اپنے حق میں کرسکتے ہیں۔
خود اعتمادی
جس طرح زندگی کے ہر موقع پر خود اعتمادی اہمیت رکھتی ہے ٹھیک ا±سی طرح انٹرویو کے دوران بھی خود اعتمادی اولین شرط ہے، مگر سوال یہ ہے کہ یہ اعتماد پیدا کیسے ہوگا؟
خود اعتمادی، تین عوامل سے آتی ہے۔ سب سے پہلا عمل یہ کہ آپ کے مقصد پر آپ کا یقین ہو۔ یعنی جب آپ کا مقصد آپ کے ذہن میں واضح ہوگا تو یقیناً آپ کےلئے ا±س پر بات کرنا اور کسی دوسرے کو قائل کرنا کافی آسان ہوجائے گا، آپ اپنی بات کسی کے سامنے بھی بیان کر تے ہوئے زیادہ پ±ر اعتماد ہوں گے، لہٰذا ایک امیدوار کو یہ واضح طور پر معلوم ہونا چاہیے کہ وہ کیا حاصل کرنا چاہتا ہے تاکہ مکمل اعتماد کےساتھ ا پنی بات دوسروں کے سامنے بیان کرسکے۔ دوسرا عمل ہے اپنے مستقبل کے بارے میں مثبت سوچ رکھنا اور تیسرا یہ کہ روایتی انٹرویو سوالات کے حوالے سے آپ پوری طرح خود کو تیار رکھیں۔
اپنے باڈی پوسچر (جسمانی کیفیت یا چال ڈھال) پر دھیان دیں
آپ کی شخصیت کا 70 فیصد اظہار آپ کی باڈی لینگویج ہی کردیتی ہے۔ جس وقت آپ انٹرویو دینے کےلئے کمرے میں داخل ہوتے ہیں، ا±س لمحے آپ کے چہرے کے تاثرات اور آپ کے منہ سے نکلے چند ابتدائی الفاظ آپ کا ایک تاثر قائم کردیتے ہیں، لہٰذا اپنا پہلا تاثر اچھا ڈالیں۔ جب آپ پ±راعتماد طریقے سے اندر داخل ہوں گے، مسکراتے ہوئے ا±ن کی جانب دیکھیں گے اور ہاتھ بڑھا کر ا±ن سے ہاتھ ملا ئیں گے تو یقیناً ا±ن کی نظر میں آپ کا پہلا تاثر اچھا جائے گا جوکہ آخر تک قائم رہے گا۔
واضح رہے بلاوجہ کی گرم جوشی کی بھی ضرورت نہیں۔ بعض لوگ ہاتھ ملانا پسند نہیں کرتے۔ سلام ضرور کریں مگر مصافحہ ا±سی وقت کریں جب وہ خود ہاتھ آگے بڑھائیں۔ ک±رسی پر بیٹھنے میں آپ کا ڈھیلا انداز، بالوں سے کھیلنا، ہاتھ پاو¿ں ہلاکر اپنی کنفیوژن دکھلانا، ٹیبل بجانا، کچھ چبانا، نظریں نہ ملانا، یہ وہ چند خرابیاں ہیں جو آپ کو مسترد کروا سکتی ہیں۔ اپنے باڈی پوسچر کو آپ کیسے بہتر بنا کر اپنی شخصیت میں ایک چارم لاسکتے ہیں، اِس حوالے سے تفصیلی بات کسی دوسرے بلاگ میں کریں گے۔
مثبت سوچ رکھیں
دوسری اور اہم بات یہ کہ اپنی سوچ میں تبدیلی لے کر آئیں، ہم جیسا سوچتے ہیں، ہمارے ساتھ اکثر ویسا ہی ہوجاتا ہے، اِسے ’پاور آف سب کانشس مائنڈ‘ کہتے ہیں یعنی کہ آپ کے لاشعوری ذہن کی طاقت۔ یہ ایک کتاب کا نام ہے جو جوزف مرفی نے لکھی ہے۔ جوزف ا پنی اِس کتاب میں اِس موضوع پر بحث کرتے نظر آتے ہیں اور ا±نہوں نے مختلف مثالوں سے یہ ثابت کیا ہے کہ آپ جو کچھ کہتے ہیں یا جو کچھ سوچتے ہیں اللہ کے حکم سے آپ کا لاشعور وہی کچھ حقیقت میں ڈھال کر آپ کے سامنے لے آتا ہے، لہٰذا اِس ضرورت کو مدِ نظر رکھتے ہوئے اپنے ذہن کی یوں تربیت کریں کہ وہ آنےوالے واقعات کے حوالے سے مثبت سوچے۔ اِسی لیے انٹرویو دینے سے قبل آپ کے ذہن میں ایک تصوراتی خاکہ ہونا چاہیے کہ آپ انٹرویو دینے جا رہے ہیں اور انٹرویو میں بہت اچھا پرفارم کرنے کے بعد کامیاب ہوگئے ہیں، یو ں یقیناً آپ کے ساتھ اچھا ہی ہوگا۔
اپنی سوچ کو منتشر ہونے سے بچائیں۔ جتنا وقت انٹرویو کےلئے انتظار میں بیٹھیں ا±س دوران اپنے ذہن میں انٹرویو کے بارے میں سوچیں، یہ سوچیں کہ آپ سے کیا کیا سوالات پوچھے جاسکتے ہیں اور آپ ا±ن کا کیا جواب دیں گے۔ اپنے ذہن کو مطمئن رکھیں، اگر گھبراہٹ ہو تو کسی دوسرے ا±میدوار سے بات چیت کریں، آپس میں تعارف کریں، یوں دو فائدے ہوں گے، ایک تو آپ کا ذہن انٹرویو کے حوالے سے کسی منفی بات سے محفوظ رہے گا، دوسرا آپ کے پروفیشنل تعلقات بڑھیں گے۔
لباس
لباس نہ صرف صاف ستھرا اور موجودہ فیشن کے مطابق ہو بلکہ آرام دہ بھی ہونا ضروری ہے۔ بعض دفعہ ہم اچھا نظر آنے کےلئے اِس قدر بے آرام لباس پہن لیتے ہیں کہ انٹرویو کے موقع پر سارا اعتماد ا±س بے آرامی کی وجہ سے ختم ہوجاتا ہے۔ چنانچہ لباس کے حوالے سے یہ بات کا فی اہم ہے کہ لباس آرام دہ ہو اور آپ ا±س میں خود کو نارمل محسوس کریں۔ رنگوں کا انتخاب سمجھداری کے ساتھ کریں، بہت زیادہ شوخ رنگ نہ ہوں، بلکہ سادہ یا پھر ڈارک ہوں، کنٹراسٹ پر بھی دھیان دیں۔
آپ کی ڈریسنگ یہ بتاتی ہے کہ آپ نے اِس ملاقات کےلئے تیاری کی ہے، جس سے انٹرویو لینے والے پر بھی ایک اچھا تاثر جاتا ہے۔ ہر انٹر و یو پر تھری پیس سوٹ پہن لینا مناسب نہیں البتہ جس پوسٹ کےلئے آپ اپلائی کر رہے ہیں کم از کم ا±س لحاظ سے یا پھر ا±س سے ایک درجہ اوپر کا لباس استعمال کریں۔
یہاں یہ بات بتاتا چلوں کہ انٹرویو میں اچھا پہننے کےلئے شاہ خرچی کی ضرورت نہیں، آپ خاص انٹرویو کےلئے ایک لباس سنبھال کر رکھیں اور صر ف انٹرویو میں ہی ا±س کا استعمال کریں، واضح رہے یہ لباس اوپر دی گئی ٹپس کے مطابق مناسب اور آرام دہ ہو۔
سوالات کی تیاری
ہر انٹرویو میں تمام سوالات پچھلے انٹرویو سے مختلف نہیں پوچھے جاتے بلکہ کچھ سوالات تقریباً ہر انٹرویو میں ایک جیسے ہوتے ہیں، اِن سوالات کو ’روایتی انٹرویو سوالات‘ کہا جاتا ہے۔ انٹرنیٹ سے آپ اِن تمام روایتی سوالات کی فہرست حاصل کرسکتے ہیں، مثلاً عام طور پر پہلا سوال کیا جاتا ہے کہ ’اپنے بارے میں بتائیں؟‘ یہاں آپ سے آپ کی پیشہ ورانہ اہلیت اور تجربے کی بابت دریافت کیا جارہا ہے۔ اِسی طرح ا یک اور سوال کہ ’اپنی اسٹرینتھس اور ویکنیسز (صلاحیتوں اور کمزوریوں) کے بارے میں بتائیں؟‘، اور ایسے ہی ایک اور سوال پوچھا جاتا ہے کہ ’آپ کیوں ملازمت تبدیل کرنا چاہ رہے ہیں؟‘، اِس کے علاوہ اور بھی بہت سے سوالات ہیں جو کہ روایتی انٹرویو سوالات کہلاتے ہیں جس کے بارے میں ہم آنے والے بلاگز میں تفصیلی بات کریں گے۔اِس تیاری کا فائدہ یہ ہے کہ جب انٹرویو میں آپ سے یہ سوالات پوچھے جائیں گے تو ا±س وقت آپ سوچنے کے بجائے براہِ راست سوالات کا جواب دینے کی پوزیشن میں ہوں گے، اور یوں اپنی حاضر جوا بی سے انٹرویو پینل پر ایک اچھا تاثر ڈال سکیں گے۔
اردو یا انگریزی کا استعمال
انٹرویو میں اردو کا استعمال زیادہ بہتر ہے یا انگریزی کا؟ یہ ایک اہم اور ذرا پیچیدہ سا سوال ہے۔ زیادہ بہتر یہ ہے کہ جس زبان میں آپ سے سوال کیا جائے آپ بھی ا±سی زبان میں جواب دیں۔ لیکن اگر سوال انگریزی میں کیا جائے اور آپ کی انگریزی اتنی اچھی نہ ہو کہ آپ ا±س سوال کا جواب انگریزی میں دے سکیں تو بہتر یہ ہے کہ سوال سمجھنے کے بعد ٹوٹی پھوٹی انگریزی میں جواب دینے کے بجائے ا±ردو میں ہی جواب دیں، یوں آپ اپنی انگریزی کے حوالے سے اچھا تاثر نہیں بٹھا سکیں گے البتہ آپ اپنی پیشہ ورانہ اہلیت اور تجربے کے حوالے سے اپنا پیغام کافی بہتر انداز میں ا±ن تک پہنچا سکیں گے۔
ایمانداری ہی بہترین پالیسی ہے
کہتے ہیں کہ جو شخص سچ بولتا ہے ا±س کو کوئی بات یاد رکھنے کی ضرورت نہیں پڑتی۔ سچ بولتے ہوئے آپ کے الفاظ میں روانی اور لہجے میں اعتما د ہوگا، جبکہ جھوٹ اور بناوٹ آپ کے اعتماد کو متزلزل کردیں گے، لہٰذا انٹرویو دیتے ہوئے ہمیشہ سچ بات کریں، سچ کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑ یں، یاد رکھیں کہ آپ چند ماہ میں ایک بار انٹرویو دیتے ہیں، جبکہ آپ کے سامنے موجود انٹرویو لینے والے کےلئے یہ روز کا کام ہے۔ جب آپ سے کوئی سوال کیا جائے تو آپ ا±س کا مختصر اور سیدھا جواب دیں، یہ نہ ہو کہ آپ اپنے لمبے اور ا±کتا دینے والے جوابات سے ا±س کی نظر میں اپنا غلط تاثر بٹھا دیں۔
آخری مگر بہت ہی اہم بات یہ کہ آپ کو معلوم ہوکہ آپ کے سی وی یا ریزیومے میں کیا لکھا ہوا ہے۔ عام طور پر لوگ کاپی کرنے میں بہت بار ایسی چیزیں بھی لکھ دیتے ہیں جن کے بارے میں ا±نہیں خود علم نہیں ہوتا، مثلاً کیریئر آبجیکٹیو جو کہ اکثر افراد کاپی پیسٹ کرتے ہیں جب ا یسے افراد سے دوران انٹرویو ا±ن کے آبجیکٹیو (مقصد) کے بارے میں سوال کیا جاتا ہے کہ ا±س کی وضاحت کریں تو پھر ا±ن کے پاس یا تو کوئی جواب نہیں ہوتا اور جواب دینے کی کوشش بھی کرتے ہیں تو ناکافی معلومات کی وجہ سے صحیح جواب نہیں دے پاتے۔
اِسی طرح بعض ا±میدوار اپنی جاب ڈسکرپشن لکھتے ہوئے اِس قدر مشکل الفاظ کا چناو¿ کرلیتے ہیں کہ ا±س حوالے سے انٹرویو میں جب پوچھا جاتا ہے تو ا±ن سے کوئی جواب نہیں بن پاتا، اِس لیے اپنے ریزیومے کے حوالے سے آپ کو لفظ بلفظ معلوم ہونا چاہیے کہ ا±س میں کیا کیا لکھا ہے اور کس مقصد کے تحت لکھا ہے تاکہ جب آپ سے اِس حوالے سے کوئی سوال کیا جائے تو آپ ا±س کا جواب بغیر کسی توقف اور سمجھداری سے دے سکیں۔

Profession