Tags » Marxism

On Black Lives Matter and the Question No One Seems to be Asking (But Should Be)

Many questions have been and continue to be raised about the movement known as Black Lives Matter and its pursuit of social justice.

But the question no one seems to be asking is one which, in my humble opinion, is the most fundamental of all: 1,373 more words

My Worldview

My sociological understanding of Marxism

In taking Sociology alongside Media Studies and English Language at A Level, its fair to say it wasn’t my strongest subject. Despite this, starting this university course has showed me how much I learnt in my Sociology lessons, and how my knowledge was not accurately reflected in my A Level result. 416 more words


Let's Get Critical

Finally, we’ve embarked upon the last tradition of them all, the Critical Tradition. I know, I know we took a while to get here but alas! 419 more words

For a Dionysian proletariat

Robert Rives La Monte is today a largely forgotten figure in the history of Marxian socialism. He’s probably best remembered for his epistolary exchange with the fiery journalist H.L. 2,207 more words


John Reed: Πώς λειτουργούν τα Σοβιέτ

Ανάμεσα στις κακοήθειες και τα ψέματα που διαδίδονται παντού ενάντια στη Ρωσία των Σοβιέτ, ακούει κανείς κραυγές απόγνωσης.

“Δεν υπάρχει ίχνος κυβέρνησης στη Ρωσία”. “Δεν έχουνε καμιά οργάνωση οι Ρώσοι εργάτες”.


منحرف مارکسی سماج واد اور بھوبھل اڑاؤ پروجیکٹ

پیٹی بورژواوی کی طبقاتی نفسیات پہ کارل مارکس نے بڑا ہی بلیغ اور لطیف پیرائے میں طنز کرتے ہوئے کہا تھا، ” درمیان طبقے کے لوگوں کا سر آسمان کی طرف اور پاؤں کیچڑ میں ہوتے ہیں” اور اس پیٹی بورژوازی طبقے کی دانشور پرت میں سے سابق انقلابیوں کی حالت تو اس سے بھی زیادہ بری ہوجاتی ہے-ایک سابق مارکسی سماج واد پیٹی بورژوا دانشور جب خوشحال ہوکر لبرل رنگ میں رنگا جاتا ہے تو وہ اپنی طبقاتی مستحکم پوزیشن کے دفاع کے لئے سب سے پہلے کارل مارکس پہ حملہ آور ہوتا ہے-بلکہ مرے ایک دوست کہتے ہیں کہ پرانے منحرف سماج واد مارکسی اپنے لبرل دانشوروں کے ساتھ ملکر کارل مارکس کے اصل وژن کو اغواء کرنے کی کوشش میں جت جاتے ہیں اور جتنی بھوبھل (گرد) اڑائی جاسکے وہ اڑاتے ہیں-کارل مارکس پہ اس کا یہ حملہ کھلے دشمن کی طرح نہیں ہوتا بلکہ وہ ایک دوست اور محقق کے روپ میں اس پہ حملہ کرتا ہے-اس حملے میں وہ کارل مارکس کو اس کے نظریات سے ہی بیگانہ ثابت کرنے پہ تل جاتا ہے-ہمارے ہاں اگرچہ مغرب کی طرح علمیاتی ڈسکورس کے ساتھ ایسی کاوشیں کرنے کا سٹیمنا سابق مارکس واد لبرل دانشوروں کے پاس ہے نہیں لیکن وہ اپنے کالموں اور مضمونوں میں کارل مارکس کے ساتھ یہ سب کچھ کرنے کی پوری کروشش کرتے رہتے ہیں-

73 more words


Althusser, The State Ideological Apparatuses

“In order to advance the theory of the State it is indispensable to take into account not only the distinction between state power and state apparatus… 1,267 more words