Tags » Talash

तलाश - The Search....

ऐ मालिक, तेरे तलाश में निकल पड़ा था

गलियों में, चौराहो में,

किताबों के पन्नो में, कोहरे के धुंध में,

समुन्दर की गहराइयो में, आकाश की ऊंचाइयों में,

Poetry

Kabhi Kabhi Log
Behtreen Ki Talash Mein
Behtar Ko Bhi Kho Dety Hai…!!

Khwab Ki Talash

Chalo aaj ek safar ki…
shuruwat karte hain.
Kho gayi hain jo manzil,
unki talash karte hain.
Kuch murjhaye khwabon ko,
Kuch soyi khwashon ko, 49 more words

Safarnama...

Kab tak rhega in viraano se vasta, Kabhi to milega wo khoya rasta…
Ghuma krta tha jispe me mast hoke, Kho chuka hun me jisse na jane kahan vyast hoke… 130 more words

Memories

تلاش

تحریر سبین علی

وہ ایک شاعر اور مصور تھا جو بھٹکتا ہوا اُس بستی میں آن پہنچا تھا جہاں اس کے اطراف میں موجود کل کائینات مٹی دھول اور اندھیروں سے اٹی تھی. اس کے ارد گرد نہ تو حسین چہرے تھے اور نہ ہی رنگا رنگ فطری مناظر جنہیں وہ کینوس پر اتار لیتا. اس نے اپنی تصویروں میں گرد آلود پاؤں، سوکھے پھول خاردار جھاڑیاں، خالی ڈبے ، ٹوٹے ہوئے بنچ اور گہری رات کا سکوت پینٹ کر دیا. اپنے شعروں میں کھوٹے سکوں ، جانوروں، کالے بد شکل اور محروم انسانوں کے قصیدے لکھ ڈالے. اس نے ایک پرانے کھمبے کی مدھم ہوتی روشنی میں بیٹھ کر تصویریں بنائیں تھیں، وہ کھمبا اس کا ہم راز تھا. مناسب دیکھ بھال اور گھاس پھوس سے محروم باغ کے جس بنچ پر وہ بیٹھا کرتا تھا وہ بھی اس کا رفیق بن چکا تھا.

اس کی زندگی میں اس پینٹینگز کبھی نہ بک سکیں نہ ہی کوئی اس کے اشعار کا مداح پیدا ہوا. وہ کاغذوں میں پڑا رہا اور وقت کی دیمک ایک دن اُسے نگل گئی.
کچھ عرصہ کے بعد بستی کے لوگوں نے اُس پرانے کھمبے کو جو زنگ آلود ہونے لگا تھا اکھاڑ کر فونڈری میں گلا دیا گیا جِس کی دھات سے تار بنائے گئے اور ان تاروں کو پھر مختلف سازوں میں جوڑ دیا گیا. بعد مدت کے ہر تار سے اُس شاعر کے نغموں کی اداس دھنیں گونجیں اور سماعتوں کو نئے ذوق سے ہم کنار کر گئیں . باغ میں پڑے لکڑی کے پرانے بینچ پر پرندوں کی ٹولیاں آ کر بیٹھنے لگیں اور اس کی تصویروں کو نئی معنویت عطا کرنے لگیں. لوگ یہ سب منظر دیکھتے حیران ہوتے رہے. رفتہ رفتہ اس کی تمام پینٹیگز کھوجی گئیں اور عجائب گھروں کی زینت بنیں. خستہ کاغذوں پر لکھے اس کے اشعار زبان ذد عام و خاص ہوئے. کینوس کے قطعات پر بنے مناظر ایک دوسرے کو کئی سوالیہ نشان لیے تکتے اور کاغذوں میں لکھے الفاظ آپس میں چہ مگوئیاں کرنے لگے کہ آخر لوگوں کو اس فنکار کے مرنے کے بعد ان کاغذ کے ٹکروں اور کینوس کے قطعات میں کس شے کی تلاش ہے ؟ شاید آرٹسٹ کی موت کی …….

Sabeen Ali

तलाश

ऐ दिल
कहाँ खो गई मैं,
चल फिर से ढूंढे उसे
खुद की तलाश में,
शुरू सफ़र करे
कदम बढ़ाए ,
मंजिल के लिए

जरुरी है वापस लाना,
उस खोई हुई ‘नामी’ को
खोने न देना उसे,
इस बे-दिल दुनिया में

ऐ दिल
कहाँ खो गई मैं,
चल ले आये वापस उसे
जरुरत है उसकी मुझे ||

Poems