Tags » Urdu

ھم لوگ نہ تھے ایسے۔ ۔ 

​ھم لوگ نہ تھے ایسے

ہیں جیسے نظر آتے
اے وقت گواہی دے
ھم لوگ نہ تھے ایسے
یہ شہر نہ تھا ایسا
یہ روگ نہ تھے ایسے
دیوار نہ تھے رستے
زندان نہ تھی بستی
آزار نہ تھے رشتے
خلجان نہ تھی ہستی
یوں موت نہ تھی سستی
یہ آج جو صورت ہے
حالات نہ تھے ایسے
یوں غیر نہ تھے موسم
دن رات نہ تھے ایسے
تفریق نہ تھی ایسی
سنجوگ نہ تھے ایسے
اے وقت گواہی دے
ھم لوگ نہ تھے ایسے

امجد اسلام امجد

Hikayat E Zindagi

Error 1

Kahi dur iss shor se…

Udaa le chal mujhe e ghata…

Kahi dur, uss khushbu sang,

E khuda,

Shaant saa krde sab…

Bula le kareeb iss nadaan ko bhi…

46 more words
Error

kaabil

Itna kaabil ban jau,

Ki tujhko paya lu!

Saara jaha bhulkar,

Tujhme apna jahan paya lu!!

Poetry

The subjects of contemporary Urdu novels

The novel is an indicator of the development of a language. The Urdu novel started very late when compared to the poetry of the Urdu language. 32 more words

کمیونیکیشن

کمیونیکیشن کے بہت سے طریقے ہوتے ہیں جیسے وربل، نان وربل، رٹن،ویوول وغیرہ۔مگر عمومی طور پراس کے لیے دوطریقے استعمال کیے  جاتے ہیں، یعنی وربل اور نان وربل۔

 وربل وہ جس میں اپنی بات سمجھانے کے لیے ہم آوازوں اور الفاظ اور جملوں

کا استعمال کرتے ہیں۔جیسے عام بول چال میں ہوتا ہے۔ اور نان وربل کمیونیکیشن وہ جس میں اپنی بات سمجھانے کے لیے اشاروں،باڈی لینگوئج اور بعض اوقات ‘ادائووں’ کا استعمال کیا جاتاہے۔

جنرلزم کی کتب میں اس کی بڑی اچھی تفصیل بیان ہے۔اس کی اور بھی بہت سی فارم ہیں جیسے رٹن کمیونیکیشن جیسے میں آپ سےتحریروں کے ذریعے بات چیت کر رہی ہوں مگر کمیونیکشن محض ان ہی طریقوں کی محتاج نہیں ہے۔ اس کے اصل معنی مجھےاب جا کر سمجھ آتے ہیں۔میں نے اس کی بہت سی فارمز کو دیکھا ہے اور مزید دیکھ رہی ہوں۔ دیکھا جائے تو اصل کمیونیکیشن تو یہ ہے ہی نہیں جو ہمارے سامنے ہے۔یہ تو شاید اصل کمیونیکیشن کا آدھ یا چوتھائی حصہ بھی نہ ہو۔جسے تو ہم  میں سے اکثر لوگ سمجھ بھی نہیں سکتے اور شاید آدھے لوگوں کا ایمان بھی نہ ہو مگر وہ موجود ہیں اورسمجھنے والے کو اپنی موجودگی کا احساس دلاتی رہتی ہیں۔

کیا کبھی آپ نے سمجھا ہے کہ مردہ مرنے کے بعد کہاںجاتا ہے اور کیسے اپنے اہل وعیال کو تسلی دیتا ہے کہ وہ خوش یا نا خوش ہے؟ یا پیدا ہونے سے پہلے بچہ ماں  کے پیٹ میں اسے کیسے بھوک، پیاس کا احساس دلاتا ہے؟

 یہ خواب کیا ہوتے ہیں؟ یہ عالموں،عاملوں، جادوگروں،پیروں کے پاس موکل کہاں سےآتے ہیں اور ان کی ان سے کیسے بات چیت ہوتی ہے؟میرے اورآپ جیسے انسان کے دل میں کسی مستقبل میں آنے والی مصیبت یا حادثے کے بارے میں کیسے اشارے’ مل جاتے ہیں؟’

 یہ الہام کیسے ہوتے ہیں؟یہ ‘دل کو دل سے راہ’ کیسے پیدا ہو جاتی ہے؟یہ دل میں  کیسے پتا چل جاتا ہے کہ سچ کیا ہے جھوٹ کیا ہے؟

ہم اچانک بات بے بات۔۔۔۔ بے چین کیسے ہو جاتے ہیں اور جس کے بارے میں دل اداس ہوتا ہے وہ بھی ہمیں کچھ دیر بعد کال کر کے یہی کہتا ہے کہ بہت دل اداس ہوا تم سے بات کرنے کے لیے۔

یہ قیامت کے دن کی نشانیاں کیسے نظر جاتی ہیں؟ اور یہ روحیں کیا ہے؟ یہ روحانیت سے منسوب انسان معتبر روحوں سے باتیں کیسے کرتے ہیں؟ یہ بابوں کو اچھی اور بری بو کیسے آنے لگتی ہے اور وہ مختلف انسانوں میں سے نکلتی ہوئی روشنیوں، ان کی فریکیونسیز اور وائیبز کیسے دیکھ لیتے ہیں؟ یہ یوگی حضرات منفی و مثبت انرجی کیسے بھانپ لیتے ہیں ؟پھر یہ ٹیلی پیتھی اور مانیٹ گیمز کیا ہیں؟

یہ دماغ کو لے کر سائنس ابھی تک ششدہ و پریشاں کیوں بیٹھی ہے اور یہ ضمیر کیوں بڑبڑاتا رہتا ہے ہر وقت؟

یہ سب کمیونیکیشن ہے بھیا،وربل،نان وربل یا پھر ان دونوں سے اوپر!ا

کبھی جو فرصت ہو تواس فارم کو سمجھنے کی غرض سے چپ کر جانا۔چپکے سےاپنے ادر گرد سے آنے والی تمام آوازوں اور آہٹوں کو غور سے سننا اور ان میں چھپے احساسات کو سمجھنے کو کوشش کرنا۔پھر ان احساسات کر پیچھے چھپی وجوہات کو پڑھنا ۔۔۔خودہی پردے ہٹنے لگیں گے۔

Urdu