Tags » Urdu

And here I stand...

جشنِ رنگ و بو ہے اور میں ہوں

وہ آج روبرو ہیں اور میں ہوں

قریب آ کے مجھے ڈھونڈتی ہے وہ

وہ مگنِ جستجو ہیں اور میں ہوں

Ghazal

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

وہ شخص اب یاں نہیں ملے گا

وہ شخص اب اک سحر کی صورت

جہاں میں پھیلا ہوا ملے گا

رہِ خدا کے سپاہیوں کی

دعائوں میں وہ رچا ملے گا

ستیزہ گاہوں میں جاں لڑائو

وہاں وہ خود تم سے آملے گا

وہ شخص اب یاں نہیں ملے گا

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﮐﺘﺎﺏِ ﺩﻭﺭﺍﮞ ﮐﮯ ﮨﺮ ﻭﺭﻕ ﭘﺮ

ﺣﯿﺎﺕ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺭﻗﻢ ﺷﺪﮦ ﮨﮯ

ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﺳﯿﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﺭﺩ ﭘﻨﮩﺎﮞ

ﻓﻐﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﮩﻢ ﺷﺪﮦ ﮨﮯ

ﮐﺌﯽ ﺻﺪﯼ ﮐﺎ ﺟﮩﺎﺩِ ﭘﯿﮩﻢ

ﻣﺴﺎﻋﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺿﻢ ﺷﺪﮦ ﮨﮯ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﻧﻈﺎﻡ ﺍﺳﻼﻡ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ ﺟﺐ

ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﺎﺯﮦ ﻇﮩﻮﺭ ﮨﻮﮔﺎ

ﺟﮩﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﻮﺭِ ﻧﺸﻮﺭ ﮨﻮﮔﺎ

ﻭﻗﻮﻉِ ﻣﺤﺸﺮ ﺿﺮﻭﺭ ﮨﻮﮔﺎ

ﻭﮦ ﺩﮮ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺧﺒﺮ ﺳﺤﺮ ﮐﯽ

ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﺍ ﺑﺎﻃﻞ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ ﮨﻮﮔﺎ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮔﻮ ﺑﻈﺎﮨﺮ

ﺟﮕﮧ ﺟﮕﮧ ﮨﮯ ﺳﺮﺍﻍ ﺍﺱ ﮐﺎ

ﻭﮨﯽ ﮨﮯ ﺳﺎﻗﯽ، ﺍﺳﯽ ﮐﯽ ﻣﺤﻔﻞ

ﺍﯾﺎﻍ ﺍﺱ ﮐﺎ، ﭼﺮﺍﻍ ﺍﺱ ﮐﺎ

ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﺩﻝ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ

ﺟﮭﻠﮏ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﺍﺱ ﮐﺎ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

ﻧﮧ ﺭﻭﺅ ﺍﺱ ﮐﻮ ﮐﮧ ﺟﻠﻮﮦ ﻓﺮما

ﻭﮦ ﮐﮩﮑﺸﺎﮞ ﺗﺎ ﺑﮧ ﮐﮩﮑﺸﺎﮞ ﮨﮯ

ﻓﺮﺍﺯِ ﺟﻨّﺖ ﮐﮯ ﺳﺒﺰﮦ ﺯﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ

ﺭﻭﻧﻖِ ﺑﺰﻡ ﻗﺪﺳﯿﺎﮞ ﮨﮯ

ﮨﻮﺍ ﻣﻘﺮّﺏ ﻭﮦ ﺍﻧﺒﯿﺎُ ﮐﺎ

ﻭﮦ ﺁﺝ، ﻣﺨﺪﻭﻡ ﻧﻮﺭﯾﺎﮞ ﮨﮯ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ

نعیم صدیقی

Urdu

काफिरों की नमाज़

सदियों से जगी रही इस बस्ती में , मैं ख्वाब लिए खड़ा हूँ 

जैसे काफिरों की इस भीड़ में नमाज़ लिए खड़ा हूँ 

इल्म अब रहता भी नहीं मुझको , आने वाले कल का अपने 

मैं बीते कल की लाश पे अपना आज लिए खड़ा हूँ। 

 

खामोशियों की तलाश में हूँ भटकता , इन चीखों के जंगल में  

मूक सब आँखे हैं , ज़हन सब चुप 

सिले से इन होठों पे , सरगम सी आवाज़ लिए खड़ा हूँ 

जैसे काफिरों की इस भीड़ में नमाज़ लिए खड़ा हूँ। 

 

पीठ पे ख़ंजर के ज़ख्म कई बार गिने हैं मैंने ,

कई बार खोया है खुदको , किसी को पाने की लड़ाई में 

कई बार उड़ना चाहा उस जहां को ,

जहा इश्क़ हो  , फुरसत हो  , सुकून हो… 

इन्हीं परकटे अरमानों की परवाज़ लिए खड़ा हूँ ,

जैसे काफिरों की इस भीड़ में नमाज़ लिए खड़ा हूँ। 

Hindi

बड़ी दुश्वारियां हैं

बड़ी दुश्वारियां हैं,
दिल गूंगा हो चला है अब , ज़हन को लाखों बीमारियां हैं
बड़ी दुश्वारियां हैं।सुलगता हुआ जहाँ है ये
सभी रूहें जल चुकी
महज पुतले बचे हैं मतलबी से
जैसे राख में दबी पड़ी अधमरी चिंगारियां हैं ,
बड़ी दुश्वारियां हैं।किसी का साथ निभाता है क्या कोई अब भी ,
क्या अब भी होती है यारियां बिन समझौते की ,
या बस लाशें बची हैं इस इमारतों के जंगल में।
और अब सोचता हूँ के मैं भी लाश हो जाऊं
ज़िंदा पर ख़ामोश , बेजबान , मतलबी
ना जीने की तलब बची है अब , ना मरने की तैयारियां हैं,
बड़ी दुश्वारियां हैं।

बिस्तर में दुबकी अधमरी उम्मीद से पूछा मैंने ,
के चल साथ मेरे उस उफ़क के पार जहां नया भी होगा कोई ,
जहाँ ना होगी यारियां मतलब की ,
ना बाज़ारो में बिकता होगा ईमान लोगों का,
ना होती होगी नुमाइश किसी के जज़बातों की,
कुछ देर पड़ी रही वो भी लाश सी खामोश , फिर बोली सर झुका के
मेरी कई मजबूरियाँ हैं , मेरी भी कई लाचारियाँ हैं ,
बड़ी दुश्वारियां हैं।

Hindi

ابن صفی ہی ابن انشاء بنے تھے

کمال ہے حد ہو گئی بے خبری کی، علم تحقیق میں اتنے بڑے بڑے دعوے کرنے کے باوجود ہمیں یہ تک معلوم نہیں تھا کہ اس علم میں ہم سے بھی کوئی بڑا ہے بلکہ ہم تو یہ ارادے باندھ رہے تھے کہ اسلام آباد میں کوئی ’’جگاڑ‘‘ وغیرہ کر کے علم تحقیق میں کسی ایوارڈ وغیرہ کے لیے اپنی سو چھید والی جھولی پھیلائیں لیکن ایک اخبار نے ہماری امیدوں پر سیلاب کا پانی پھیر دیا، حالانکہ ہمیں ’’ابن انشاء‘‘ شناسی کا بڑا دعویٰ تھا بلکہ سو چھیدوں والی جھولی کے سلسلے میں اپنا پیر و مرشد مانتے تھے بلکہ ان کی کئی پیروڈیاں بھی کر رکھی ہیں جیسے

کل چودہویں کی رات تھی گاتا رہا ابا ترا

کچھ نے کہا ہے یہ ’’سانڈ‘‘ ہے کچھ نے کہا ’’بکرا‘‘ ترا

لیکن اس اخبار نے انکشافات کی ایک اچھی خاصی ڈھیری لگاتے ہوئے لکھا ہے کہ ابن انشاء جاسوسی ناول نگار بھی تھے اور ابن انشاء کے ساتھ ساتھ ان کا ایک نام ابن صفی بھی تھا۔ ممکن ہے بعض لوگ ہماری بات پر شک ظاہر کریں یا مذکورہ اخبار سے منفی تنقید اور دیرینہ پرخاش کا نام دے کر کوئی مقدمہ وغیرہ ٹھونک دے اس لیے اخبار کی پوری خبر پیش خدمت ہے، خبر کے دائیں جانب سیف علی خان کی تصویر اور بیان ہے جس میں کرینہ کے نواب صاحب نے کترینہ کیف کو پُرکیف اور کترنے والے حسن کی مالک قرار دیا ہے۔

جانب مشرق محترمہ ممدوحہ ایان علی کا بیان تصویر کے ساتھ ہی عیاں ہے کہ وہ اپنی پچیسویں سالگرہ 30 جولائی (سال نہیں لکھا ہے) کو منائے گی، نیچے مائیکل جیکسن کی بہن کا سات سال بعد میوزک میں آنے کا مژدہ جاں فزا ہے اور اوپر کسی کریکٹر کی تصویر ہے، مذکورہ محققانہ انکشافانہ اور حیرانہ و پریشانہ خبر کچھ یوں ہے کہ فکشن کو ادب میں مقام دلانے والے جاسوسی ناول نگار کا 87 ویں یوم پیدائش 26 جولائی کو منایا گیا۔

اردو ادب میں مصنفین کی تعداد تو بے شمار ہے لیکن جاسوسی ادب میں ابن صفی کے مقام کو کوئی بھی نہیں پہنچ سکا، اردو کے اس منفرد شاعر مصنف اور کالم نگار نے 1927ء میں جالندھر کے ایک نواحی گاؤں میں آنکھ کھولی جن کا اصل نام شیر محمد خان جب کہ قلمی نام ابن انشاء تھا ابن انشاء کو سفر نامہ نگاری اور کالم نگاری میں منفرد مقام حاصل ہے اردو شاعری اور کالم نگاری کو نئی جہت دینے والا یہ نظم گو غزل گو شاعر اپنے پیچھے اردو کا گراں قدر خزانہ چھوڑ کر منوں مٹی تلے جا سویا مگر ان کی ’’رخصتی‘‘ کے بعد بھی ان کا نام زندہ اور تابندہ ہے کیونکہ جاسوسی ادب میں ان کا کوئی جواب پیدا نہیں ہو سکا۔

یہ خبر پڑھ کر ہم پر جو گزری سو گزری ہمارے ’’دعویٰ تحقیق‘‘ کو بھی پسینے آ گئے پہلے تو ہمیں ایک زور کا جھٹکا لگا اور پھر سکتہ سا ہو گیا اور ہمارا دعویٰ تحقیق شرم سے پانی پانی ہو کر فرش پر پھیل گیا، وہ تو ایک اچھی بات یہ ہوئی کہ ہم نے ان دنوں ’’ابن‘‘ کے بارے میں کچھ لکھا نہیں ہے ورنہ تحقیق کی دنیا میں ہماری بھد اڑ جاتی کہ اتنے بڑے دعویٰ تحقیق کے باوجود ہماری معلومات کتنی ناقص بلکہ ناقص العقل ہیں کہ جسے ہم یو پی کے ’’تارہ‘‘ کے ’’اسرار احمد‘‘ سمجھ رہے تھے وہ جالندھر کے نواحی گاؤں کا شیر محمد خان نکلے گا۔

پہلے تو ہم نے اس معاملے میں سوچا لیکن سوچنے سے کام نہیں نکلا تو پھر سونچنے لگے، پھر بھی مسئلہ نہیں سلجھا تو لنگر لنگوٹ کس کر ’’غور کے حوض‘‘ میں کود گئے کافی غوطے اور ڈبکیاں کھانے کے بعد جو آبدار موتی ہاتھ لگا وہ یہ تھا کہ اصل کیا دھرا اس شخص کا کہا ہے جو دنیا بھر کا جھوٹا ہے۔ ہم سے کہا تھا کہ میں ابن صفی ہوں اور شاعری میں نوح ناروی کا شاگرد ہونے کے ناطے اسرار ناروی تخلص کرتا ہوں اور اصل میں لدھیانہ کے نواحی گاؤں کا شیر محمد خان تھا اور ابن انشاء کے نام سے مشہور تھا۔

دراصل ہمارے ساتھ ٹھیک ویسا ہی دھوکا ہوا تھا جو جنگ میں ایک سپاہی کے ساتھ ہوا تھا۔ دوران جنگ رات کو وہ ایک جنگل میں اپنے کیمپ کی طرف جا رہا تھا کہ اندھیرے میں آواز آئی بھائی ایک بم کے ٹکڑے نے میری ٹانگیں اڑا دی ہیں مہربانی کر کے مجھے اپنے کیمپ لے چلو سپاہی نے اندھیرے میں ٹٹول کر اسے پیٹھ پر لادا اور کیمپ کی طرف چل پڑا دشمن کی گولہ باری بھی چل رہی تھی اور بے چارہ سپاہی اندھیرے میں گرتا پڑتا اور بچتا بچاتا آخر کار اپنے کیمپ کے قریب پہنچا کیمپ کے پہرہ دار نے اسے ہالٹ کیا اور ٹارچ کی روشنی میں دیکھا کہ وہ ایک سربریدہ لاش کو اپنی پیٹھ پر لادے ہوئے ہے دراصل راستے میں کسی بم کا ٹکڑا اس زخمی کا سر اڑا گیا تھا پہرہ دار نے سپاہی سے کہا اس سر کٹے لاش کو کہاں لے جا رہے ہو۔

سپاہی حیران ہو کر بولا کیا اور جب لاش کو اتار کر دیکھا تو اس کا سر ندارد تھا، بولا ۔۔۔۔ یہ تو بڑا جھوٹا نکلا مجھ سے کہا کہ اس کی ٹانگ اڑ گئی ہے جب کہ اصل میں اس کا سر اڑا ہوا تھا، اب ابن صفی مرحوم کو ہم جھوٹا تو نہیں کہہ سکتے کیوں کہ ہم ان کے بہت بڑے فین تھے اور ان کے ساتھ ہماری خط و کتابت بھی رہی تھی اور ان کا وہ خط اب بھی ہمارے پاس کہیں پڑا ہو گا جس میں انھوں نے اپنے بارے میں لکھا تھا کہ ان کا اصل نام اسرار احمد ہے اور شاعری میں حضرت نوح ناروی سے رشتہ ’’تلمذ‘‘ رکھتے ہیں لیکن یہ تو کہنا ہی پڑے گا کہ جاسوسی ادب لکھ لکھ کر وہ خود بھی اسرار سے شاید ’’پراسرار‘‘ بننے کی کوشش کرنے لگے اور ان پر اپنے ہی کردار علی عمران کا اثر ہو گیا تو جو کبھی ڈھمپ بنتے تھے کبھی تہور علی صندوقی اور کبھی بلیک زیرو وغیرہ اور غالباً اسی شوق میں انھوں نے لدھیانہ کے نواحی گاؤں میں آ کر شیر محمد خان کے نام سے ’’آنکھ‘‘ کھولی خبر میں ایک ہی آنکھ کھولنا لکھا ہے اس لیے کہ ایک آنکھ تو وہ پہلے بمقام نارہ پہلے کھول چکے تھے شاید ’’ابن‘‘ کے لفظ سے انھیں بہت زیادہ لگاؤ تھا اس لیے یہاں بھی باقی تو سب کچھ بدل لیا لیکن ابن کے ساتھ صفی کے بجائے انشاء لگایا گویا اپنی پراسرار طبیعت کی تسکین کرتے ہوئے ۔۔۔۔ ’’صاف چھپتے بھی نہیں سامنے آتے بھی نہیں‘‘ کا سلسلہ شروع کیا۔

بلکہ یہاں ایک اور لطیفے کے مطابق بالکل الٹا کام کیا۔ بازار میں ایک شخص نے دوسرے کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر پلٹایا اور اس سے بغل گیر ہو کر بولا کتنی مدت بعد ملے ہو تم نعیم ۔۔۔ دوسرے نے خود کو چھڑاتے ہوئے کہا میں نعیم نہیں رضا ہوں، اس شخص نے قہقہہ مار کر کہا یار تم نے تو کمال کر دیا میرا خیال تھا کہ تم نے صرف اپنی ’’شکل‘‘ بدل لی ہے لیکن تم نے تو اپنا نام بھی بدل لیا ہے۔

چنانچہ ابن صفی نے بھی نارہ سے لدھیانہ اور پھر کراچی سے لاہور آ کر نہ صرف نام بدل لیا ہو گا بلکہ اپنی شکل و صورت بھی بدل لی ہو گی کیونکہ انھوں نے اپنے کرداروں سے میک اپ کرنے اور حلیہ بدلنے کا فن بھی سیکھا ہوا تھا، قلم کے دھنی تو تھے ہی چنانچہ یہاں سفر نامہ نگاری بھی کرنے لگے اور کالم نگاری بھی ۔۔۔ بلکہ ہمیں تو ایسا لگتا ہے کہ اور ایسے ’’پراسرار‘‘ شخص سے بعید بھی نہیں کہ ان کے سفر نامے بھی جھوٹے ہوں اور ایک جگہ بیٹھ کر تصور یا جغرافیے کی مدد سے لکھے ہوں جب کوئی شخص فرضی کرداروں کے علاوہ شکرال اور زیرو لینڈ جیسے مقامات پیدا کر سکتا ہے تو اس کے لیے بیٹھے بیٹھے سفر نامے لکھنا کیا مشکل ہے۔

خود ہم نے ایک عدد سفر نامہ امریکا کا لکھا ہوا ہے جس میں نہ صرف چند ایئر ہوسٹوں سے دل چسپ مکالمے درج کیے ہیں بلکہ بحرالکاہل کے اوپر پرواز کے دوران دو نظمیں بھی لکھی ہیں جن میں کنڈولیزا رائس کے جمال جہاں سوز کا ذکر ہے کیوں کہ اسی کی دعوت پر تو ہم امریکا جا رہے تھے، کمال کی بات یہ ہے کہ واپس آتے ہوئے بحرالکاہل کے اوپر ہم نے ایک اور نظم انجلینا جولی کے بارے میں بھی لکھی ہے جو ہمارے پاس محفوظ ہے اور اگر اس نے امریکا مدعو کیا تو یہ نظم اسے تحفتاً پیش کریں گے۔

مطلب یہ کہ ابن صفی نے ابن انشاء بن کر جو سفر نامے لکھے ہیں وہ کچھ زیادہ مشکل کام تو نہیں اب کس نے یہ تصدیق کرنا ہے کہ وہ یونیسکو کے رکن تھے یا نہیں اور سفر نامے یونسیکو کے اجلاسات میں شرکت کرنے کے بعد لکھے ہیں یا یہ سب کچھ تخیئل کا نتیجہ ہے، ویسے کمال انھوں نے شاعری میں کر دکھایا ہے کہ ان کی ابن انشاء والی شاعری اس پرانی اسرار ناروی والی شاعری سے قطعی مختلف ہے لیکن پھر بھی اس میں ان کی وہ جاسوسی اور سراغرسی کی جھلک کہیں آ جاتی ہے جیسے

کوچے کو ترے چھوڑ کر مفرور ہو جائیں گے مگر

پولیس تری چوکی تری، بستی تری ’’تھانہ‘‘ ترا

اس شہر میں کس سے ملیں ہم سے تو چھوٹی محفلیں

ہر شخص تیرا نام لے، ’’مانگے‘‘ لیا قرضہ تیرا

سعد اللہ جان برق

Urdu

Couplet (Firaq Gorakhpuri)

न यगाने हैं न बेगाने तेरी महफ़िल में
न कोई ग़ैर यहां है न कोई अपना है

No unknown strangers crowd around
Yet no friend have I ever found.

Depression

بوسہ منہ اور گردن کے کینسر کا باعث

کینبرا: کبھی سگریٹ اور شراب نوشی کو کینسر کی بڑی وجہ جانا جاتا تھا لیکن اب مغربی معاشروں کی آزاد خیالی اور جنسی بے راہ روی انہیں کینسر کے نئے میدان میں کھینچ لائی ہے اسی لیے آسٹریلوی محققین نے خبردار کیا ہے کہ بوسہ لینے سے کینسر جیسی جان لیوا بیماری ایک سے دوسرے شخص تک منتقل ہو سکتی ہے اور یہ سگریٹ نوشی سے بھی زیادہ تیزی سے پھیلتی ہے۔ آسٹریلیا میں کی جانے والی تحقیق میں کہا گیا ہے کہ بوسہ لینے سے منہ اور گردن میں پھیلنے والا ’پاپیل لوما‘ وائرس (ایچ پی وی) ایک انسان سے دوسرے انسان میں منتقل ہو کر کینسر کا باعث بن جاتا ہے۔ تحقیق کے بانی اور رائل ڈارون اسپتال کے شعبہ میکسیکو فیشل اور ہیڈ اینڈ نیک سرجری کے انچارج ڈاکٹر تھامس کا کہنا ہے کہ منہ اور گردن کے کینسر کے 70 فیصد بیماریاں اسی وائرس سے پیدا ہوتی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ جب کوئی شخص ایچ پی وی سے متاثر ہوتا ہے تو اس متاثرہ شخص میں کینسر کا خطرہ 250 فیصد بڑھ جاتا ہے جب کہ یہ گردن کے حصے اور وفیرنکس میں بننے والا یہ وائرس مرد اور خاتون دونوں کو ہی متاثر کرتا ہے۔ تحقیق میں کہا گیا ہے کہ کینسر کی 100 سے بھی زائد اقسام ہوتی ہیں جن میں سے 8 اقسام ایچ وی پی سے گردن میں جنم لیتی ہیں۔ سینٹر فار ڈی سیز کنٹرول ایند پروی وینشن کا کہنا ہے کہ تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ منہ کے ذریعے پھیلنے والا کینسر یعنی ایچ وی پی بوسہ لینے کے دوران منتقل ہوتا ہے جب کہ ڈاکٹر تھامس نے خبردار کیا ہے کہ بغیر کسی خواہش کے بوسہ لینے سے بھی ایچ وی پی ایک دوسرے میں منتقل ہو سکتا ہے۔ تحقیق کے مطابق صرف امریکا میں کینسر کی 70 فیصد کیسز ایچ وی پی کی وجہ سے ہوئے اس لیے اس طرز عمل کو بدلنے کی ضرورت ہے۔ ڈاکٹر تھامس نے اس کینسر کی مزید وضاحت کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ ایچ وی پی کینسر کو گردن اور منہ کے کینسر کا سونامی کہا جائے تو بے جا نہ ہو گا۔

International